منی لانڈرنگ کیس، ایف بی آر سے شہباز شریف کی جائیداد کاآڈٹ ریکارڈ طلب

منی لانڈرنگ کیس، ایف بی آر سے شہباز شریف کی جائیداد کاآڈٹ ریکارڈ طلب
منی لانڈرنگ کیس، ایف بی آر سے شہباز شریف کی جائیداد کاآڈٹ ریکارڈ طلب

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)احتساب عدالت نے منی لانڈرنگ کیس میں فیڈرل بورڈ آف ریونیو( ایف بی آر) سے شہبازشریف کی جائیدادکاآڈٹ ریکارڈ مانگ لیا،جج جوادالحسن نے کہاکہ اگرآڈٹ ہوا ہے تو آئندہ سماعت پر پیش کریں۔

احتساب عدالت لاہور میں شہبازشریف کیخلاف منی لانڈرنگ کیس کی سماعت ہوئی، احتساب عدالت کے ایڈمن جج جوادالحسن نے کیس کی سماعت کی،شہبازشریف کے وکیل امجد پرویز تاحال پیش نہ ہوئے ،فاضل جج نے کمرہ عدالت میں رش پر اظہارناراضی کیا۔

عدالت نے کہا کہ ہر بار پیشی پر رش ہوتا ہے ،آپ سرٹیفکیٹ دیں کہ رش میں کسی کو کورونا نہیں ،آپ لوگوں کو خود خیال رکھناچاہئے ۔

عدالت نے شہبازشریف سے استفسارکیا کیا آپ کچھ کہنا چاہ رہے ہیں؟،شہبازشریف نے کہاکہ آپ کے حکم سے میڈیکل بورڈ آگیاآپ کا شکریہ ۔

شہبازشریف نے کہاکہ چنیوٹ مائنز اینڈمنرلز کے متعلق کچھ کہناچاہتا ہوں،لیگی رہنما نے کہاکہ میں نے جو600 ارب بچائے وہ ایک اہمیت رکھتے ہیں ،نیب نے اگر600 ارب بچائے وہ ٹھیک ہی کہہ رہیں ہوں گے،میں نے سب سے پہلے اس رقم کو بچانے کیلئے بچت کی۔

عدالت نے کہاکہ یہ کیس میرے پاس نہیں ہے ،جب موقع آئے تو متعلقہ عدالت میں بیان کیلئے پیش ہو جائیے گا،شہبازشریف نے کہاکہ پہلا فیز640 ارب روپے کا تھا،وہ جوسیونگ ہوئی تھی وہ اس قوم کی ہوئی تھی ،میں نے غریب عوام کاپیسہ بچایا،نیب کو میرا شکریہ ادا کرناچاہئے ،عدالت نے سماعت کچھ دیر کیلئے ملتوی کردی۔

وقفے کے بعد دوبارہ کیس کی سماعت ہوئی تو شہبازشریف کے وکیل اورپراسیکیوٹر میں تلخ کلامی ہوگئی۔شہبازشریف کے وکیل امجد پرویز نے کہاکہ آپ باربار گواہ پر جرح کے درمیان مداخلت کررہے ہیں،پراسیکیوٹر نیب ن کہاکہ سوال ختم ہونے پر بولااب آپ سانس لینے پر بھی پابندی لگادیں،عدالت نے شہبازشریف کے وکیل اورپراسیکیوٹر کو خاموش کرادیا، فاضل جج نے کہاکہ اگرکوئی غلط کرتاہے تو میں موجود ہوں فکر نہ کریں ۔

عدالت نے شہباز شریف اور حمزہ شہباز کے جوڈیشل ریمانڈ میں 16 جنوری تک توسیع کردی اورآئندہ سماعت پر مزید گواہان کو بیان قلمبند کرانے کیلئے طلب کرلیا۔

مزید :

قومی -علاقائی -پنجاب -لاہور -