پاکستانیوں نے متحدہ عرب امارات کے صحراؤں میں وہ کام کردیا جو عربوں نے کبھی سوچا بھی نہ ہوگا، تاریخ رقم کردی

پاکستانیوں نے متحدہ عرب امارات کے صحراؤں میں وہ کام کردیا جو عربوں نے کبھی ...
پاکستانیوں نے متحدہ عرب امارات کے صحراؤں میں وہ کام کردیا جو عربوں نے کبھی سوچا بھی نہ ہوگا، تاریخ رقم کردی

  

دبئی (طاہر منیر طاہر) پاکستانی کسانوں کی محنت شاقہ سے صحرائے عرب کے ریگستان بھی ہریالی سے لہلہانے لگے اور گلستانوں میں تبدیل ہوگئے۔ سرسبز  باغات سے ہر طرح کے پھل اور سبزیاں بھی اگنے لگیں جس کا سہرا پاکستانی باغبانوں اور کسانوں کے سر جاتا ہے جن کی شب و روز کی محنت سے یہاں کے صحرا بھی ہرے بھرے ہوگئے اور لوگوں کی توجہ کا مرکز بن گئے۔ گزشتہ دنوں ایک مقامی عرب حمد خلیفہ الکعبی کی دعوت پر پاکستان جرنلسٹس فورم یو اے ای کے عہدیداران و ارکان نے ان کے زرعی فارم کا دورہ کیا جس کا اہتمام صحافی احمد قریشی سارنگ نے کیا۔

پی جے ایف کی مطالعاتی ٹیم میں صدر اشفاق احمد، عمار اشفاق، سہیل خاور، حافظ زاہد علی، ارشد انجم، خالد محمود گوندل، احمد قریشی، سعدیہ عباسی، عاصمہ علی زین، شیخ محمد پرویز، ارشد چودھری، عارف شاہد، جمیل خان، امجد قاسمی، سبط عارف، اعجاز گوندل، راجہ ارشد، راجہ عرفان، اور وحید بابر شامل تھے۔ حمد خلیفہ الکعبی کا زرعی فارم دوبئی سے 70 کلومیٹر دور شارجہ کے علاقہ میں عمان بارڈر پر مواقع ہے۔

قصبہ فلی کے قریب واقع اس زرعی فارم سے تازہ سبزیاں جیسے بھنڈی ، شملہ مرچ، ٹماٹر، کھیرے، لیموں، پالک، دھنیہ، پودینہ، بینگن، توری، کوسا، بیر، خربوزہ اور تربوز وغیرہ باآسانی دستیاب ہیں۔ اپنی ضروریات پوری کرنے کے بعد اضافی سبزیاں اور دیگر اجناس منڈی میں برائے فروخت بھی بھیجی جاتی ہیں۔ حمد خلیفہ الکعبی نے اس زرعی فارم کی کامیابی کا سہرا دو پاکستانی بھائیوں عجیب براہمانی اور جمال براہمانی کے سرباندھتے ہوئے کہتے ہیں کہ ان دونوں بھائیوں نے اپنے دیگر ساتھیوں سمیت اس ریگستان کو گوگل و گلزار بنادیا ہے جس پر ہم ان کے شکرگزار ہیں اور ان کی محنت کے معترف ہیں۔ متذکرہ زرعی فارم میں کھجوروں کے باغ بھی ہیں جہاں سے ہر سال کثیر تعداد میں کھجوریں حاصل ہوتی ہیں۔

مطالعاتی دورہ کے دوران حمد خلیفہ الکعبی، مصبح الکعبی اور ان کے بچے بھی موجود تھے جنہوں نے صحافیوں کے ساتھ دلچسپ گفتگو میں وقت گزارا۔ متذکرہ صاحبان نے بتایا کہ حکومت یو اے ای زراعت بڑھانے کے سلسلہ میں ان سے تعاون کررہی ہے اور وہ اس سلسلہ کو آگے بڑھاتے ہوئے جانوروں کا فارم بھی قائم کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں جس میں اونٹ بھیڑیں، گائے اور بکرے بھی پالے جائیں گے۔ فارم کی سیر کے آخر پر میزبانوں نے صحافیوں کی ٹیم کی تواضع عریبین سٹائل فوڈز سے کی۔ مہمانداری پر صحافیوں نے میزبانوں کا تہہ دل سے شکریہ ادا کیا۔

مزید :

عرب دنیا -تارکین پاکستان -