منی لانڈرنگ کیس، الطاف حسین تفتیش کیلئے دوبارہ طلب ، آئی ایس آئی توڑنے کے خط کی تصدیق،برطانیہ نے امریکہ اور کینیڈا سے بھی مدد مانگ لی

منی لانڈرنگ کیس، الطاف حسین تفتیش کیلئے دوبارہ طلب ، آئی ایس آئی توڑنے کے خط ...
منی لانڈرنگ کیس، الطاف حسین تفتیش کیلئے دوبارہ طلب ، آئی ایس آئی توڑنے کے خط کی تصدیق،برطانیہ نے امریکہ اور کینیڈا سے بھی مدد مانگ لی

  

لندن (مرزا نعیم الرحمان) الطاف حسین کے خلاف برطانیہ میں جاری منی لانڈرنگ کیس میں برطانوی تحقیقاتی ایجنسیوں نے دو خیراتی اداروں کو بھی شامل تفتیش کر لیا ہے اور تحقیقات میں امریکہ اور کینیڈا سے بھی مدد مانگ لی ہےجبکہ برطانیہ کی دو  اکائنٹنگ کمپنیوں کو بھی شاملِ تفتیش کرلیا گیا ہے  ۔برطانوی میڈیا رپورٹ کے مطا بق ایم کیو ایم کے رہنماو¿ں کے زیر انتظام چلنے والے ان خیراتی اداروں کے بینک اکاو¿نٹ اور دوسرے ریکارڈ کی چھان بین کی جا رہی ہے ،ذرائع کا کہنا ہے کہ تفتیشی حکام کو شبہ ہے منی لانڈرنگ کے لئے ان خیراتی اداروں کو استعمال کیا گیا ہے جن میں سے ایک ادارہ برطانیہ میں کام کر رہا ہے جبکہ دوسرا امریکہ اور کینیڈا میں کام کر رہا ہے،برطانوی حکومت نے آئی ایس آئی کو توڑنے سے متعلق الطاف حسین کے خط کی بھی تصدیق کردی اور دھمکیوں سے متعلق غیر معمولی اجلاس بھی ہوا۔ ادارے کے مطابق وہ پاکستان میں مختلف رفاہی اور تعلیمی اداروں کی مالی امداد کرتا ہے۔ برطانوی حکام کی طرف سے منی لانڈرنگ کیس میں خیراتی اداروں کو شامل تفتیش کرنے کے بعد اس تنظیم میں ایک کھلبلی مچ گئی ہے جبکہ میٹرو پولیٹن پولیس نے 17جولائی تک الطاف حسین کو پولیس ضمانت پر چھوڑ دیا تھااور اب اُنہیں 17جولائی کو دوبارہ پولیس کے سامنے پیش ہونا ہے ۔یہ امر قابل ذکر ہے کہ پولیس کی تفتیش اگر 17جولائی تک مکمل نہ ہوئی تو انکی ضمانت میں مزید توسیع کی جا سکتی ہے۔ علاوہ ازیں میٹرو پولیٹن پولیس ‘ سکاٹ لینڈ یارڈ پولیس ‘ انسداد ہشت گردی فورس ‘ اور کراﺅن کورٹ کی پراسیکیوشن برانچ کے اہلکاروں کی ایک غیر اعلانیہ میٹنگ منعقد ہوئی جس میں منی لانڈرنگ کیس کے علاوہ دھمکی آمیز خطابات جس میں تین تلوار کے علاوہ برطانوی پولیس اور حکومت کو ڈاکٹر عمران فاروق قتل کیس میں انہیں شامل تفتیش نہ کرنے کی دھمکی عالمی سازش ‘ وغیرہ کا ذکر کیا گیا تھا کا انگلش ترجمہ کرانے کے بعد یہ الزامات عائد کرنے کا فیصلہ کر لیا گیا ہے۔ برطانیہ کا پرنٹ و الیکٹرانک میڈیا اس کیس کی تفتیش کے سلسلہ میں اپنی رپورٹس شائع کر رہا ہے، علاوہ ازیں برطانوی حکومت نے یہ تسلیم کر لیا ہے کہ آئی ایس آئی کو توڑنے کیلئے الطاف حسین کی جانب سے اس وقت کے برطانوی وزیراعظم ٹونی بلیئر کو لکھا گیا خط مستند ہے ،فریڈم آف انفارمیشن ایکٹ کے تحت جاری معلومات کے مطابق 23 ستمبر 2001ءکو لکھے گئے خط پر الطاف حسین کے دستخط ہیں یہ خط یورپی پارلیمنٹ کے رکن نیرج دیوا نے 27 ستمبر کو 10 ڈاﺅننگ اسٹریٹ پہنچایا۔ خط میں الطاف حسین نے پاکستان میں دہشت گردی کے خلاف برطانوی حکومت کو تعاون کی پیشکش کی اور اس کے جواب میں صوبہ سندھ میں حکمرانی کیلئے مساوی شراکت اور آئی ایس آئی کو توڑنے میں مدد مانگی خط میں اپیل کی گئی کہ آئی ایس آئی کو توڑ دینا چاہیے ،ورنہ وہ مستقبل میں کئی اسامہ بن لادن اور طالبان پیدا کرتی رہے گی خط کا جواب فارن اینڈ کامن ویلتھ آفس کے پارلیمانی انڈر سیکریٹری بن بریڈ شا نے دیا ۔انہوں نے ڈپلومیسی سے کام لیتے ہوئے الطاف حسین کی جانب سے دہشت گردی کی مذمت اور بین الاقوامی برادری کی معاونت کیلئے خواہش کا خیرمقدم کیاتاہم یہ واضح ہے کہ برطانیہ نے ایم کیو ایم کے رہنما کی جانب سے مدد کی پیشکش کو قبول نہیں کیا ۔

مزید : قومی /Headlines