دنیا کا وہ ملک جہاں رات ڈھلنے کے بعد مرد عورتوں کے ’شکار‘ پر نکلتے ہیں اور۔۔۔

دنیا کا وہ ملک جہاں رات ڈھلنے کے بعد مرد عورتوں کے ’شکار‘ پر نکلتے ہیں اور۔۔۔
دنیا کا وہ ملک جہاں رات ڈھلنے کے بعد مرد عورتوں کے ’شکار‘ پر نکلتے ہیں اور۔۔۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

تھیمفو(مانیٹرنگ ڈیسک) آج ہم آپ کو بھوٹان کی ایک ایسی رسم کے بارے میں بتانے جا رہے ہیں جو ہمارے یہاں نہ صرف سختی سے ممنوع ہے بلکہ اس پر اکثر لوگوں کو قتل بھی کر دیا جاتا ہے۔ بھوٹان کی اس رسم کا نام ’’بومینا‘‘ہے جس کے معنی ’’رات کا شکار‘‘ کے ہیں۔ اس رسم کے تحت نوجوان لڑکے رات کو چوری چھپے کسی لڑکے کے گھر میں داخل ہو کر اس کے کمرے میں چلے جاتے ہیں۔ اس رسم کا واحد مقصد شادی کے لیے ہمسفر تلاش کرنا ہوتا ہے۔ اس رسم کے تحت لڑکا لڑکی کوپیشگی اطلاع دے کر یا بغیر اطلاع دیئے گھر میں گھس سکتا ہے۔

مزید پڑھیں:بیگم کے انتخاب میں خواتین کی کونسی چیز مردوں کیلئے سب سے زیادہ اہم ہوتی ہے؟جدید تحقیق نے ہمارے تمام خیالات غلط ثابت کر دیئے

اگرچہ ’’بومینا‘‘ بھوٹان کی ایک قدیم رسم ہے لیکن اب یہ وسطی اور مشرقی بھوٹان کے دیہی علاقوں تک محدود ہو کر رہ گئی ہے۔اس رسم کے تحت رات کے وقت گلیوں، بازاروں یا دیگر سنسان جگہوں پر بھی لڑکیوں کے ساتھ ملاقاتیں کی جاتی ہیں۔ اس کے لیے لڑکے اور لڑکی کا پہلے سے آشنا ہونا بھی ضروری نہیں ہوتا۔ وسطی اور مشرقی بھوٹان میں اب بھی نوجوانوں کو رات کے وقت لڑکیوں کی تلاش میں سڑکوں پر مارے مارے پھرتے دیکھا جا سکتا ہے۔

اگر اس رسم کی تفصیل میں جائیں تو مرد رات کے وقت گروپوں کی شکل میں باہر نکلتے ہیں، جس مرد کی مطلوبہ لڑکی کا گھر آجاتا ہے وہ گروپ سے الگ ہو جاتا ہے اور لڑکی کے گھر میں گھس جاتا ہے۔ ایسے میں اگر لڑکے اور لڑکی میں پہلے سے ملاقات طے ہو تو لڑکی گھر میں داخل ہونے میں لڑکے کی مدد کرتی ہے، یعنی کنڈی کھول دیتی ہے۔ لیکن اگر ملاقات طے نہ ہوتو لڑکے دیوار پھلانگ کر یا چھت سے کود کر گھر میں داخل ہوتے ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس