شاہد خاقان عباسی ،فواد چوہدری کو توہین عدالت کے نوٹس جاری

شاہد خاقان عباسی ،فواد چوہدری کو توہین عدالت کے نوٹس جاری

راولپنڈی (آن لائن)عدالت عالیہ راولپنڈ ی بنچ کے جسٹس صداقت علی خان اور جسٹس شاہد محمود عبا سی پر مشتمل ڈویژن بنچ نے سابق وزیراعظم وقومی اسمبلی کے حلقہ این اے53اور57کے امیدوارشاہد خاقا ن عبا سی اور تحریک انصاف کے ترجمان واین اے 67 جہلم سے قومی اسمبلی کے امیدوارفواد چوہدری کے خلاف توہین عدالت کی الگ الگ درخواستوں پر ابتدائی سماعت کے بعدپیمرا ،سا بق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور ترجما ن پی ٹی آ ئی فواد چوہدری کو نوٹس جاری کر دیا جبکہ پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی ( پیمرا)کو ہدایت کی گئی کہ 18 جولائی کوشاہد خاقان عبا سی اور فواد چوہدر ی کے عدلیہ مخالف بیانات اور تقاریر کا ر یکار ڈ عدا لت میں پیش کر ے قبل ازیں راولپنڈی بنچ نے یہ درخواستیں عدالت عالیہ کی پرنسپل سیٹ پر لاہور بھجواتے ہوئے تجویز کیا تھا کہ ان درخواستوں کی سماعت کے لئے لارجر بنچ تشکیل دیا جائے جس پر عدالت عالیہ نے یہ درخواستیں واپس بھجواتے ہوئے ڈویژن بنچ مقرر کر دیاراولپنڈی کے شہری ملک ریاض انجم نے فاروق اعوان ایڈووکیٹ کے ذریعے گزشتہ ماہ 28جون کو عدالت میں دائردرخواست میں شاہد خاقان عباسی چیئرمین پیمرااور سیکرٹری وزارت اطلاعات و نشریات کو فریق بناتے ہوئے موقف اختیار کیا تھاکہ ہائی کورٹ راولپنڈی بنچ کے جسٹس عباد الرحمان لودھی پر مشتمل خصوصی الیکشن ٹریبونل نے 27جون کوسابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کے خلاف انتخابی عذرداری میں انہیں آرٹیکل 62(i)Fکے تحت تاحیات نااہل قرار دیا جس کے رد عمل میں شاہد خاقان عباسی نے نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں معززجسٹس عباد الرحمان لودھی کے خلاف توہین آمیزاور ماورائے آئین زبان استعمال کی۔جبکہ بعد ازاں 03جولائی کوراولپنڈی بنچ کے جسٹس صداقت علی خان نے سماعت کے بعدسابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اور تحریک انصاف کے ترجمان فواد چوہدری کے خلاف پہلے سے دائر توہین عدالت کی 2الگ الگ درخواستوں سمیت دائر ہونے والی 2نئی درخواستیں بھی لارجر بنچ کو منتقل کرنے کی تجویز کے ساتھ چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کو بھجوا دی تھیں جس کے لئے جسٹس صداقت علی خان نے ریمارکس دیئے تھے کہ چونکہ یہ سنگین نوعیت کا ایک سنجیدہ معاملہ ہے لہٰذا بہتر ہے کہ یہ درخواستیں چیف جسٹس کو بھجوا دی جائیں دریں اثناپاکستان تحریک انصاف کے ترجمان واین اے 67 جہلم سے قومی اسمبلی کے امیدوار فوادچوہدری کے خلاف بھی توہین عدالت کی درخواست دائرکی گئی ہے جسے دوبارہ راولپنڈی بنچ میں منتقل کر دیا گیا ہے ادھرسابق وزیراعظم شاہد خاقان عبا سی کے خلاف تو ہین عدالت کیس کے وکیل فاروق اعوان نے آن لائن کو بتایاکہ توہین عدالت کی یہ مثال گزشتہ 70 برس میں نہیں ملتی اور ملک کے سابق وزیر اعظم نے میڈیا پر ججوں کے خلاف بات کی جس کے ثبوت بھی معزز عدالت کو فراہم کر دیئے گئے تھے انہوں نے کہاکہ کیس کی اہمیت کی بدولت معزز عدالت نے کیس لارجر بینچ کومنتقل کیا تھاتاہم یہ کیس دوبارہ ڈویژن بنچ کوبھجوایا گیاہے ۔

توہین عدالت

مزید : صفحہ آخر