5۔13بلین ڈالر کا زرمبادلہ کمانے والا ٹیکسٹائل سیکٹر تنزلی کا شکار

5۔13بلین ڈالر کا زرمبادلہ کمانے والا ٹیکسٹائل سیکٹر تنزلی کا شکار

فیصل آباد (بیورورپورٹ) پاکستان ہوزری مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن نارتھ زون کے ترجمان نے کہا ہے کہ ملک کیلئے 13.5 بلین ڈالر کا زر مبادلہ کمانے والا ٹیکسٹائل سیکٹر بتدریج تنزلی کا شکار ہے اورتمام تر کوششوں کے باوجود یہ شرح 10.5بلین ڈالر سے نہ بڑھ سکی ہے لہٰذا حکومت ٹیکسٹائل سیکٹر کی مشاورت سے فوری اقدامات یقینی بنائے تاکہ ٹیکسٹائل سیکٹر کی برآمدات کا مقررہ ہدف پورا کرتے ہوئے خطیر زر مبادلہ کا حصول ممکن بنایا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ جی ایس پی پلس، زیرو ریٹنگ کی سہولت، لانگ ٹرم و شارٹ ٹرم فنانس مارک اپ ریٹس میں خاطر خواہ کمی، ایل این جی کی شکل میں گیس اور بجلی کی صورت میں انڈسٹری کو توانائی کی پہلے سے بہتر انداز میں سپلائی کے باوجود ابھی تک تنزلی کا شکار ٹیکسائل سیکٹر بے یقینی کا شکار ہے۔انہوں نے حکومت کو اپنے ریجنل مسابقت کنندگان کی مثالیں بھی دی ہیں اور ان ممالک میں عائد کر دہ ٹیکسٹا ئل سیکٹر مینو فیکچررز و ایکسپورٹ پالیسیز سے بھی آگاہ کیا ہے جس کے نتیجے میں وہ ممالک چند سالوں میں 800ملین ڈالرز سے ایپرل سیکٹر میں اپنے سفر کا آغاز کر کے بہترین پالیسیوں کی بدولت 32بلین ڈالرز تک پہنچ گئے ہیں لیکن ہمارے پالیسی میکرز نہ سمجھ آنے والی وجوہات کی بناء پر عملی اقدامات کرنے سے گریزاں ہیں۔انہوں نے کہا کہ اگر حکومت نے ان کی قابل عمل تجاویز پر عمل نہ کیا تو یہ شعبہ مزید ابتری کا شکار ہو جائے گا جس سے ملک و قو م کو قیمتی زر مبادلہ سے ہاتھ دھونے سمیت عالمی منڈیوں سے بھی فراغت حاصل ہو جائے گی۔انہوں نے کہا کہ اگر خدانخواستہ ایسا ہوا تو ملک کا صنعتی پہیہ جام ہونے سے بے روز گاری بڑھے گی اور غربت میں بھی اضافہ ہوگا۔

مزید : کامرس