پشاور، آل موبائل فون ایسوسی ایشن کا صوبائی اسمبلی کے باہر احتجاجی مظاہرہ

پشاور، آل موبائل فون ایسوسی ایشن کا صوبائی اسمبلی کے باہر احتجاجی مظاہرہ

پشاور(سٹی رپورٹر)آل خیبر پختونخوا موبائل فون ایسوسی ایشن کے ایکشن کمیٹی کا استعمال شدہ موبائل فون سیٹوں پر نئے سیٹوں پر برابر ٹیکس اور رجسٹرڈ موبائل فون سیٹوں کو بلاک کرنے کیخلاف گزشتہ روز صوبائی اسمبلی کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا اور حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ ٹائپ و ٹیگ اپرول کے حل نکالنے کیساتھ ساتھ صارفین کے سیٹ رعایت کے تحت اوپن کئے جائے بصورت دیگر احتجاجی دھرنا جاری رہے گا۔مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڈز اور بینرز اٹھا رکھے تھے جس پر انکے حق میں مطالبات درج تھے۔مظاہرے کی قیادت ایسو سی ایشن کے صدرحمیداللہ،سٹی سنٹرذیشان،سینئر نا ئب صدرفضل حبیب،قصہ خوانی کبا ڑی بازار کے صدر خالد،پیر عثمان،سردار صاحب سنگھ اور دیگر دکانداروں نے کی۔اس موقع پر مظاہرین نے کہا کہ حکومت کی طرف سے استعمال شدہ اور نئے موبائل فون سیٹوں پر برابر ٹیکس غیر منصفانہ اقدام ہے جسکو ہم مسترد کرتے ہیں کیونکہ مذکورہ ٹیکس سے موبائل کے کاروبار کو اربوں روپے کا خسارہ ہوا ہے اور پشاور میں 3700دکانیں ہے جن سے ہزاروں کاں دانوں کا روزگار وابستہ ہے۔انہوں نے کہا کہ ٹائپ و ٹیگ اپرول حل نہ ہونے کی وجہ سے صارفین کے موبائل ان ہونے کے بعد بلاک ہو چکے ہے جسکی وجہ سے ائے دن دکانداروں اور صارفین کے مابین لڑائی جھگڑے معمول بن گئے ہیں جبکہ دوسری جانب مختلف کی ادائیگی کے باوجود حکومت کی نئی ٹیکس پالیسی سے چھوٹے دکانداروں کیل؛ئے روزگار چلانا مشکل ہو گیا ہے تاہم بڑی ملٹی نیشنل برینڈز نے موبائل کاروبار پر اپنی اجار داری قائم کی ہے۔مطاہرین نے وزیر اعظم عمران خان اور دیگر اعلیٰ حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ موبائل فون سیٹوں پر ویلیو کے حساب سے ٹیکس کی شرح لاگو کی جائے اور صارفین کے زیر استعمال بلاک موبائل فون کو رعایت کے تحت کھولا جائے اور ون ونڈو تیکس لاگو کیا جائے تاکہ چھوٹے موبائلڈیلرس کو بھی اپنا کاروبار فروغ کرنے کا موقعہ ملے بصورت دیگر صوبہ بھر میں شٹر ڈاؤن ہڑتال کرینگے۔

نوشہرہ(بیورورپورٹ) ملک بھر میں بڑھتی ہوئی مہنگائی اور غیرضروری ٹیکسز کے نفاذ کے خلاف آل پاکستان کلرکس ایسوسی ایشن بھی میدان میں کھود پڑا اور قلم چھوڑ ہڑتال شروع کردی نوشہرہ میں ایپکا کے قلم چھوڑ ہڑتال سے سرکاری دفاتر میں امور ٹھپ ہوکر رہ گئے سائلین بے نوااپنے گھروں کو لوٹے آل پاکستان کلرکس ایسوسی ایشن کے مرکزی صدر فضل غفار باچا کی خصوصی ہدایت پر ایپکا ضلع نوشہرہ کے صدر محمدادریس ہاشمی نے ضلع بھر میں جمعرات کے روز سے قلم چھوڑ ہڑتال کا سلسلہ شروع کردیا جس سے سرکاری دفاتر میں امور ٹھپ ہوکر رہ گئے ہرسرکاری سائلین کی لمبی قطاریں لگ گئی اس موقع پر ایپکا ضلع نوشہرہ کے صدر ادریس ہاشمی اور دیگر رہنماؤں حافظ اکرام الحق، امداد اللہ، عبدالعزیز، غلام سرور، الف گل، ابرار بابر، شفقت اللہ اور دیگر نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں موجودہ بجٹ سے ہرشعبہ روزگار کے ساکھ کو نقصان پہنچا ہے اور ہرطبقے پر معاشی بوجھ روز بروز بڑھ رہا ہے جس سے سرکاری ملازمین بھی متاثر ہورہے ہیں کیونکہ مہنگائی میں اضافہ تنخواہوں میں اضافے سے کئی گنا زیادہ ہے اور حکومت بجٹ میں سرکاری ملازمین کے لئے جو فیصلے کرنے تھے ان سے حکومت منحرف ہوگئی ہے اس لئے سرکاری ملازمین اور بالخصوص اپیکا حالیہ بجٹ کو یکسر مسترد کرتی ہے اورحکومت سے مطالبہ کرتی ہے کہ کلرک برادری کیلئے ٹائم سکیل کا اجراء اور تنخواہوں میں مہنگائی کے تناسب سے اضافہ کیاجائے۔

مزید : صفحہ اول