جب حضرت عثمان غنیؓ نے تھوڑا سا شہد مانگنے والے کو پورا اونٹ دے دیا

جب حضرت عثمان غنیؓ نے تھوڑا سا شہد مانگنے والے کو پورا اونٹ دے دیا
جب حضرت عثمان غنیؓ نے تھوڑا سا شہد مانگنے والے کو پورا اونٹ دے دیا
سورس: pixnio

  

حضرت عثمانِ غنی رضی اللہ عنہ اللہ کے نبی کو اتنے پیارے تھے کہ اپنی دو صاحبزادیاں ان کے نکاح میں دیں، آپ رضی اللہ عنہ شرم  و حیا کے پیکر اور سخاوت  میں بے مثال تھے، تاریخ اور احادیث کی کتب میں حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کی سخاوت کے بے شمار واقعات بھرے پڑے ہیں لیکن آج جو واقعہ ہم آپ کو سنانے جا رہے ہیں اسے سن کر یقیناً آپ کا ایمان تازہ ہوجائے گا۔

 ایک شخص اپنی بیماری کے علاج کیلئے شہد ڈھونڈ رہا تھا، اس نے کئی لوگوں سے سوال کیا لیکن اسے کہیں سے بھی شہد نہیں مل سکا، اس دوران  ایک شخص نے اسے کہا کہ تمہیں شہد مل سکتا ہے اس کے لیے تمہیں تھوڑا دور جانا پڑے گا، وہاں شام سے ایک تجارتی قافلہ آ رہا ہے جس کا مالک بہت اچھا انسان ہے، اگر اس سے سوال کروگے تو وہ انکار نہیں کرے گا اور تمہاری ضرورت پوری کردے گا۔  ضرورت مند شخص نے شکریہ ادا کیا اور شہر سے باہر نکل آیا تاکہ قافلے کے تاجر  سے مل سکے اور شہد کی درخواست کرسکے،  آخر قافلہ آتا نظر آیا وہ فوراً اٹھا اور اس قافلے  کے امیر کے بارے میں پوچھا لوگوں نے ایک خوبصورت اوربارونق چہرے  والے شخص کی طرف اشارہ کردیا، یہ حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ تھے‘ وہ شخص  ان کی خدمت میں حاضر ہوا اور بولا: حضرت! میں ایک بیماری میں مبتلا ہوں اس کے علاج کیلئے مجھے تھوڑےسے شہد کی ضرورت ہے انہوں نے فوراً اپنے غلام سے فرمایا: جس اونٹ پر شہد کے دو مٹکے لدے ہیں ان میں سے ایک مٹکا اس بھائی کو دے دیں‘ غلام نے یہ سن کر کہا: آقا! اگر ایک مٹکا اسے دے دیا تو اونٹ پر وزن برابر نہیں رہ جائے گا یہ سن کر انہوں نے فرمایا: تب پھر دونوں مٹکے انہیں دےدیں‘ یہ سن کر غلام گھبرا گیا اور بولا آقا! یہ اتنا وزن کیسے اٹھائے گا؟ اس حوالے سے مکمل تفصیل جاننے کیلئے ڈیلی پاکستان ہسٹری کی یہ ویڈیو دیکھیں۔

ہماری مزید تاریخی اور دلچسپ ویڈیوز دیکھنے کیلئے "ڈیلی پاکستان ہسٹری" یوٹیوب چینل سبسکرائب کریں

مزید :

روشن کرنیں -