میموسکینڈل ، حسین حقانی "غدار" ٹھہرے ، سابق سفیر سیکیورٹی ٹیم کی سربراہی چاہتے تھے، سپریم کورٹ نے رپورٹ عام کرنے کی ہدایت کردی

میموسکینڈل ، حسین حقانی "غدار" ٹھہرے ، سابق سفیر سیکیورٹی ٹیم کی سربراہی ...
میموسکینڈل ، حسین حقانی

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) سپریم کورٹ میں میموکمیشن کی رپورٹ پیش کردی گئی جس کے مطابق امریکہ میں پاکستان کے سابق سفیر حسین حقانی ریاست کے وفادار نہیں ، وہ نئی سیکیورٹی ٹیم کے سربراہ بنناچاہتے تھے ۔چیف جسٹس کی سربراہی میں نورکنی بنچ کے روبرو میمو کمیشن کی سربمہر رپورٹ پیش کی گئی ۔سپریم کورٹ نے اٹارنی جنرل عرفان قادر کو میمو کمیشن کی سفارشات پر مشتمل پیرا نمبر 27 پڑھنے کی ہدایت کی جس کے مطابق میمو حقیقت ہے اور حسین حقانی نے میمو کے ذریعے امریکی مدد حاصل کرنے کی کوشش کی گئی ، وہ نئی سیکیورٹی ٹیم کا سربراہ بنناچاہتاتھا ۔کمیشن نے کہاکہ حسین حقانی بطورسفیر ریاست کے وفادار نہیں رہے ، وہ پاکستان چھوڑ کر امریکہ میں رہ رہے ہیں حالانکہ اُن کی وفاداریاں بطور سفیر پاکستان کے لیے ہونی چاہیں تھیں۔میمو کمیشن نے کہاہے کہ میمو کا مقصد سول حکومت کو امریکہ کا دوست بنانااور نئی سیکیورٹی ٹیم سامنے لاناتھا۔رپورٹ کے مطابق حسین حقانی نے آئین ، آئی ایس آئی ، فوج اور نیوکلیئراثاثوں کو انڈر مائن کرنے کی کوشش کی اور سالانہ دوملین ڈالر خرچ کیے ۔سپریم کورٹ نے رپورٹ کو پبلک کرنے کی ہدایت اور تمام فریقین کو نوٹس جاری کردیے ہیں اور حسین حقانی کے چاردن کے نوٹس پر پیش ہونے کے حلف نامے پر اُن کو کو آئندہ سماعت پر پیش ہونے کا حکم جاری کرتے ہوئے مزید سماعت دو ہفتے کے لیے ملتوی کردی ۔

مزید :

اسلام آباد -اہم خبریں -Breaking News -