چیف جسٹس سے کو تا ہی نہیں ہوئی،کریمنل ملک ریاض کو کٹہرے میں لا یا جا ئے: چو ہدری نثا ر

چیف جسٹس سے کو تا ہی نہیں ہوئی،کریمنل ملک ریاض کو کٹہرے میں لا یا جا ئے: چو ...
چیف جسٹس سے کو تا ہی نہیں ہوئی،کریمنل ملک ریاض کو کٹہرے میں لا یا جا ئے: چو ہدری نثا ر

  

اسلا م آبا د (مانیٹرنگ ڈیسک )قو می اسمبلی میں حز ب اختلا ف چو دھر ی نثا ر علی خا ن نے بحریہ ٹا ﺅ ن کے با نی ملک ریا ض کو جھو ٹا اور کر یمنل قرار دیکر قانو ن کے کٹہر ے میں لا نے کا مطا لبہ کیا ہے ۔جیو نیوز کے پروگرام "کیپٹل ٹاک "میں گفتگو کر تے ہو ئے انہو ں نے چیف جسٹس افتخا ر محمد چودھری کے صا حبزادے ارسلا ن افتخا ر کو سوا چو نتیس کرو ڑروپے دینے کے مشکو ک قرار دیا اور چیف جسٹس کی وکا لت کرتے ہوئے کہا کہ جج کی حثیت سے چیف جسٹس سے کو ئی کو تا ہی نہیں ۔ان کا کہنا تھا کہ ملک ریاض نے ٹی وی پر سب کے سامنے کہہ دیا تھا کہ وہ کرپشن سے معاملات آگے بڑھاتے ہیں اور جنکی ملک ریاض کی اہلیہ بھی یہ کہہ چکی ہیں کہ یہ جھوٹ بہت بولتے ہیں۔ ملک ریاض نے جیسے بلٹ پروف گاڑی دی ہے اسے کٹہرے میں لایاجائے اور تحقیقات کی جا ئیں ۔ایک سوال کے جوا ب میں انکا کہنا تھا کہ ملک ریاض سے تعلقا ت کا جوا ب وزیر اعلی پنجا ب شہبا ز شریف خو د دیں گے ۔انکا کہنا تھا کہ جس شخص نے ارسلا ن افتخا ر اور اسکی فیملی کی تصا ویر کھینچی ہوں وہ کس قسم کا شخص ہو سکتا ہے آ پ خو د اندازہ کر سکتے ہیں سپریم کورٹ سے لیکر کریمنل کو رٹ تک اس کے خلا ف مقدما ت ہیں انکا کہنا تھا کہ مسلم لیگ(ن) اورپاکستان پیپلزپا رٹی کے مذا کرات کے درمیان بھی ملک ریا ض سر گر م تھے ،جن کے صدر زرداری سے تعلقات کا اندازہ اس با ت سے لگا یا جاسکتا ہے کہ میٹننگ اور میرے لائے ہو ئے ویٹ ٹشوز کہاں ہیں؟ جو میں بیگ بھر کر لا تا ہوں ۔شہبا ز شریف اور نواز شریف کے سا تھ ملا قا ت میںقر آ ن مجید بھی لا نے والا یہ شخص ہی تھا ۔انکا کہنا تھا کہ ملک ریا ض کے خلا ف راولپنڈی میں 21 کریمنل کیس زیر سماعت ہیں،زیادہ کیسزانکے ہیں جنکی زمینوں پر قبضہ ہوا۔ہاوسنگ سوسائٹی کی زمین 4 ارب روپے میں ملک ریاض کودیدی گئی اور اسلام آبادکی ایک ارب رو پے و الی زمین بھی ملک ریاض نے ہتھیالی۔ ملک ریاض کے سو سے زائد کیس ہیں جن میں سے 26 سپریم کورٹ میں 21کریمینل کورٹس راولپنڈی ، 36کریمینل کورٹس لاہور اور دیگر مختلف عدالتوں میں ہیں۔انکا کہنا تھا کہ بد قسمتی سے پاکستا ن میں حلال اور حرام کا فرق نہیں رہا۔وہ خود کہتا ہے کہ جہاں کام رکتا ہے پیسے لگا کر کام نکا ل لیتا ہوں۔فوجیوں، سیاستدان، وکلا چھوٹی عدالتوں کو ملک ریاض نے خریدا۔بیوروکریٹس پر پیسہ لگایا اوراپنے کام نکالے۔چوہدری نثار نے ریونیو ہاﺅسنگ سکیم کا ذکر کیا جس کی مالیت چار ارب تھی یہ افسران کے لیے مختص سکیم تھی جس کو ملک ریاض نے ایک ارب روپے کم پر خریدی اور ملکی خزانے کو ایک ارب کا نقصان پہنچایا، اس کا کیس سیشن جج کی عدالت میںچلا جس کے فیصلے میں عدالت نے فیصلہ دیا کہ ملک ریاض ایک ارب روپے کا ریاست کونقصان پہنچانا چاہتا تھا۔ اس کے علاوہ ایک اور کیس جس میں جرم ثابت ہونے پر علاقہ پٹواری، گرداوودیگر سرکاری افسران کوجیل جانا پڑا جبکہ اس کیس میں ملک ریاض کے گرفتاری کے وارنٹ جاری ہوئے مگر اس کیس کے وکیل اعتزاز احسن جو ملک ریاض کوجیل جانے سے روک رہے ہیں ، چوہدری نثار نے کہا کہ ملک ریاض نے عدالت میں کوئی اور پریس کانفرنس میں کوئی اور بیان دیا ہے۔وہ اپنے سے بڑے کھیل میں ملوث ہوگئے ہیں،یہ اتنے کم عرصے میں اتنا امیر کیسے ہوا سمجھ سے بالاتر ہے۔چوہدری نثار نے کہا کہ چیف جسٹس کے باپ ہونے کے طورپر توفرائض سے کمی بیشی ہوئی ہوگی مگر بحیثیت جج ان سے کوئی غلطی وکوتاہی نہیں ہوئی۔ارسلان کوخود سمجھنا چاہیے تھا کہ وہ کس باپ کے بیٹے اورکس گھرانے کے فرد ہیں۔ان کے والد نے عدلیہ کی بحالی کے لیے قربانیاں دی ہیں، ڈاکٹر ارسلان کسی گاﺅں میں جاکر ڈاکٹرلگ جاتے توان کی عزت ہوتی مگر انہوں نے کہا مزید وہ حقائق سامنے آنے کے بغیر کچھ نہیں کہیں گے کیوںکہ ملک ریاض نے اپنے بیان میں بہت ہی تضاد واضح کیا ہے۔انہوں نے کہاکہ برطانیہ کے تین دوروں میں 34کروڑ کی بھی بات سمجھ نہیں آتی، اگر کوئی بندہ اپنا جہاز لے کر بھی جائے تواتنا خرچہ نہیں ہوتا۔چوہدری نثار نے ایک شخص کا نام بتانے سے گریز کیا اور کہا کہ وہ جانتے ہیں کہ کس نے ارسلان اور اس کی فیملی کی تصاویر کس نے بنائی ،اس شخص نے ڈیڑھ سال پہلے جس طرح بتایا اسی طرح معاملہ چل رہاہے۔انہوںنے بتایا کہ اس کیس سے ملک میںکوئی تباہی اور بربادی نہیں ہوگی ،ابھی بھی اس ملک میں ایسے لوگ ہیں جن کو خریدا نہیں جاسکتا، جوشخص اس ملک کی امید ہیں۔

مزید :

اسلام آباد -