سی پیک سے اوبورتک

سی پیک سے اوبورتک
سی پیک سے اوبورتک

  

12مئی2017ء کو وزیراعظم نواز شریف اور 27دیگرممالک کے سربراہان ایک پٹی ایک روڈ (One Belt One Road) منصوبے کے تحت منعقد ہونے والے عالمی فورم میں شرکت کے لئے بیجنگ پہنچے ۔ رابطہ سازی اور تعاون کے ذریعے خوشحالی کا نعرہ بلند کرتے ہوئے چین عالمی تجارت کا سُر خیل بننے کے لئے اپنے منصوبے (vision) کو نافذ کرنے جا رہا ہے ۔ جیسا کہ نام سے ہی ظاہر ہے اوبور منصوبہ (OBOR initiative) افتتاحی مراحل میں داخل ہو چکا ہے۔سقراط کے قول' نیک آغاز انجام بخیر'(well begin, half done)کے مصداق چینی حکومت کا اوبور (One Belt One Road)کی حمائیت و سرپرستی کرنا دراصل پاکستان میں ابتدائی مراحل میں داخل ہونے والے سی پیک منصوبے کی کامیابی کا اعلان کرنے کے مترادف ہے۔یہ نہ صرف ایک حوصلہ مند اقدام ہے، بلکہ یہ فریقین کے مابین پائے جانے والے گہرے اعتماد کا پرتو لئے ہوئے نظر آتا ہے۔سی پیک صدر شی چن پنگ کی اولو الغرمی کا مظہر ہے۔اس لئے اوبور کے اس فورم کی کامیابی کے تناظر میں پاکستان کی شرکت انتہائی اہمیت کی حامل تھی۔تاہم ، یہ زیادہ دانشمندانہ بات ہو گی کہ اوبور اور سی پیک کے مقاصد اور امکانات کو ایک دوسرے سے الگ رکھا اور سمجھاجائے۔

چلیں مان لیتے ہیں کہ سی پیک اوبور کا ایک اہم (significant) پہلو ہے لیکن اگر اس کو بڑے تناظر میں دیکھا جائے تو اوبوردراصل ورلڈ آرڈر کی تبدیلی کے لئے چین کی عظیم جیو پالیٹیکل سٹرٹیجی (Geo-Political strategy) کا عکاّس ہے، عظیم امنگوں کاحامل ایک ایسا منصوبہ جس کے تحت چین کے لوگ یورپ، ایشیااور افریقہ سے نہ صرف زمینی،بلکہ سمندری راستے سے بھی منسلک ہو جائیں گے۔ اس کا بنیادی مقصد دنیا کی تجارت و کامرس کے بڑے حصے پر غلبہ حاصل کرنا ہے،جبکہ اس کا دوسرا مقصد نئے ترقی پانے والے زمینی اورسمندری راستوں پر چینی مصنوعات کی برآمدات کے سیلاب کو رسائی دینا ہے۔ اس عظیم منصوبے کا تیسرا مقصد چین کی پھیلتی ہوئی بڑی معیشت کے لئے ہر حال میں اور بتدریج سستے تیل اور گیس کے امکانات کے حصول کو ممکن بنانا ہے ۔یہ چہار جانب مکمل ہونے والے مندرجہ ذیل چھ روٹ ہیں جو وقت کے ساتھ ایک دوسرے سے منسلک ہو جائیں گے :

1۔ چائنہ،پاکستان کوریڈور، جو جنوب مغربی چین سے پاکستان تک پھیلا ہوا ہے۔

2 ۔چین،منگولیا،روس کوریڈورجو شمالی چین سے مشرقی روس تک پھیلا ہوا ہے۔

3۔چین ،وسط ایشیاء،مغربی ایشیاء کوریڈورجو مغربی چین سے ترکی تک پھیلا ہوا ہے۔

4۔ چین،جزیرہ نما انڈو چائنہ کوریڈورجو جنوبی چین سے سنگا پور تک پھیلا ہوا ہے۔

5۔ نیو یوریشین لینڈ بریج ، جو مغربی چین سے مغربی روس تک پھیلی ہوئی ہے

6۔ میری ٹائم سلک روڈ ، جو سنگا پور کے چائنیز کوسٹ سے بحیرہ روم تک پھیلی ہوئی ہے۔

یہ تمام منصوبے مل کر اوبور کے تصور کو مکمل عملی جامہ پہناتے ہیں۔اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ سی پیک ایک اہم پراجیکٹ اور اوبور جیسی ایک عظیم کاروباری مہم یا انٹرپرائز کا ایک چھوٹا سا حصہ ہے۔ اس پورے منصو بے سے تقریبا ساٹھ ممالک چین سے منسلک ہو جائیں گے اور ان ممالک کا زیادہ تر چین کی اشیا اور سروس پر انحصار ہو گا۔ اس بھروسے کے بدلے چین ان علاقوں میں ڈویلپمنٹ انفراسٹرکچر ، تجارت ، کامرس اور دوطرفہ فائدے پر مبنی تعلقات کو فروغ دے گا۔ اکتوبر 2013 میں شی چن پنگ(Xi Jinping) کے ہاتھوں باقاعدہ آغاز کے بعد سے چین کے تمام معاشی ماہرین متفقہ طور پر اس منصوبے کی حمایت اور تعریف کر رہے ہیں۔ اوبور کے سی پیک حصے میں گوادر کو دو چند اور مرکزی اہمیت حاصل ہے کیونکہ یہ بہ یک وقت سمندری اور زمینی سلک روٹ سے منسلک ہے۔

اس منصوبے کی بدولت چینی برآمدات کو گرم پانیوں تک پہنچنے کے لئے اب بارہ ہزار کلومیٹر کازائد سفر نہیں کرنا پڑے گا۔چین باقی تمام پانچوں زیر تعمیر روٹس سے بھی یہی مسابقتی فائدہ حاصل کرنے کا متمنی ہے۔ یہ سب ایک ایسے وقت میں ہو رہا ہے جب چین کے جی ڈی پی میں پچھلے دس اہم برسوں میں ڈبل ڈیجٹ بڑھوتری کے بعد اس کی معیشت کا گراف نیچا آنے لگا ہے۔ قومی کے علاوہ ادارہ جاتی نظریہ سے ترقی اور پختگی کی ایک خاص جہت پر پہنچ کر انتہائی ترقی کا یہ گراف یا تو نیچے چلا جاتا ہے یا جدتوں اور بروقت تنظیم نو کے نتیجے میں دوبارہ زور پکڑتا ہے۔ اوبور ایک ایسی ہی تشکیل نو اور تجدد کا دوسرا نام ہے۔

سی پیک اور اوبور نہ صرف تجارت اور کامرس میں بلکہ سماجی و سیاسی گہرائیوں کے تناظر میں بھی ایک دوسرے کے مرہون منت ہیں۔ پاکستان مشترکہ بارڈر والے چین کا دیر پا اتحادی ہے۔ پاکستانی فوج شدت پسنداور عسکری تنظیموں سے شدید اور چومُکھی جنگ لڑ رہی ہے جن کے تانے بانے مبینہ طور پر جارح ہمسایہ ملک بھارت سے ملتے ہیں ۔ حقیقت پسندانہ نقطہ نظر سے لمحوں کی بات ہے کہ دہشت گردی کی یہ آگ پاکستانی بارڈر کے پار چین کے مسلم اکثریتی علاقوں تک پھیل جائے۔ انڈیا جو خطے میں برابر کا معاشی مد مقابل ہے چین کی تعمیر و ترقی میں خلل سے یقینی طور پر فائدہ اٹھا سکتا ہے۔اس لئے سی پیک نہ صرف سیاسی بلکہ معاشی مقاصد کا حامل منصوبہ ہے۔ ایک ترقی یافتہ اور مستحکم پاکستان تشدد اور عسکریت پسند تنظیموں کے پھیلاؤ کے راستے میں ڈھال بن جائے گا۔ ایک کمیونسٹ ریاست جہاں ہر طرح کے مذہبی خیالات کے پھیلاؤ کی حوصلہ شکنی کی جاتی ہے وہاں انارکی کو فروغ دینا قدرے آسان کام ہو گا۔ ایک مضبوط حکومت کی موجودگی سے پاکستان کسی بھی طرح کے بیرونی خطر ے اور مداخلت کو خطے میں روک سکے گا خواہ یہ مداخلت افغانستان میں امریکی کنٹرول سے آ رہی ہو یابھارتی راہنمائی میں ہونے والے جاسوس مشنوں(cover it operations) کے ذریعے ہو رہی ہو۔ دوسری طرف پاکستان میں صنعتی اور کمرشل کامیابیوں کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ناکافی انفراسٹرکچر اور بجلی کی قلت رہی ہے۔ سی پیک کی بدولت ان دونوں مشکلات سے نجات مل جائے گی اور نتیجتاً کئی دہائیوں سے پاکستانی معیشت کے فروغ میں پڑنے والی رکاوٹیں دور ہوں گی۔ اس سے ہمیں واشنگٹن کے زیر اثر آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک کے شکنجے سے نکلنے میں آسانی ہو گی اور حقیقی معنوں میں ہماری قوم کو سفارتی و معاشی آزادیاں نصیب ہوں گی ۔

اوبور کا ایک اور اثر انداز ہونے والا پہلو اُس فورم میں ڈونلڈ ٹرمپ کی غیر موجودگی اور پیوٹن کی موجودگی تھی۔ اس وقت تنہائی اور تحفظ کی سیاست (politics of isolation and protectionism)مغربی ممالک کے اعصاب پر چھائی ہوئی ہے۔ جہاں ایک طرف برطانیہ نے یورپی یونین سے اپنے راستے جدا کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے تو دوسری طرف یونائیٹڈ اسٹیٹس نے سب سے پہلے امریکہ کا نعرہ لگا دیا ہے اور ساتھ ہی ناٹو(NATO)جیسی تنظیم کو فرسودہ قرار دے دیا ہے۔ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے پل کی بجائے دیوار تعمیر کرنے کی پالیسی و مہم جوئی نے اوبور کی اہمیت میں غیر اختیاری طور پرمزید اضافہ کر دیا ہے۔ امریکہ کی اب وہ ساکھ نہیں رہی جو اسے قائدانہ کردار کا رتبہ عطا کرتی تھی۔ پچھلے ساٹھ برسوں سے امریکی پورے زور و شور سے اوپن ، فیئر اور فری ٹریڈ کے حامی رہے ہیں۔جیسا کہ ہمیں معلوم ہے ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن ، آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک فیئر کیپٹل ازم کے چیمپئن بنے رہے ہیں ۔ اس نظریے کا بار بار اعادہ کیا گیا تھا کہ فری مارکیٹ اور شفاف مقابلے سے معاشی عدم مساوات جیسی برائیوں کا خاتمہ ہو گا۔اس سے متعلقہ پالیسیوں نے برطانیہ اور امریکہ جیسے ممالک کو پوری دنیا کا قائد بنائے رکھا۔ اب جب کہ ہم سال 2017ء میں پہنچ چکے ہیں ، ان ممالک نے باہر دیکھنے کی بجائے اندر کی طرف جھانکنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ چین نے بجا طور پر اس صورتحال کا فائدہ اٹھایا ہے۔ صدر چن پنگ اب گلوبل ٹریڈ اور باہمی تعاون کے چیمپئن بن چکے ہیں۔ اپنے آپ کو عالمی راہبر منوانے کیلئے اوبور جیسے منصوبے کو چینی ویژن میں کلیدی اہمیت حاصل ہے ۔ ایشیا کو وہ سب کچھ مل چکا ہے جو مغرب پچھلے کچھ برسوں سے کھو چکا ہے۔ون بیلٹ ون روڈ سے منسلک تمام متعلقہ ممالک ہاتھ میں ہاتھ ڈال کر اگر سی پیک کو کامیاب کرنے کی جدوجہد کریں تو اوبور(OBOR) کے خواب کی بروقت تکمیل ہو سکتی ہے ۔ یہ کوئی حیرانی کی بات نہیں کہ سی پیک کے تحت منصوبوں میں ہونے والی سرمایہ کاری کو 42 بلین ڈالر سے بڑھا کر 54بلین ڈالر کر دیا گیا ہے۔ اس حوالے سے باہمی یاداشت کے معاہدوں (MoU) پر چینی سفارت کاروں کے ساتھ جو دستخط ہوئے ہیں ان پر اپنے عزم کی مہر ثبت کر کے پاکستان مضبوط روابط کے شاندار موقع سے فائدہ اٹھا سکتا ہے۔چینی حکومت اور اس کی وسعت پذیری کا ویژن بہت جامع ہے جس کی راہ میں معمولی انتظامی اور گھریلو سطح کی مشکلات اثر انداز نہیں ہو سکتیں ۔ چین اور پاکستان نے ابھی بہت کچھ حاصل کرنا ہے ۔ آزادی کے بعد سی پیک پاکستان میں آنے والی سب سے بڑی سرمایہ کاری ہے اور اسی طرح آزادی کے بعد سے اب تک چین کے لئے تجارتی اور سفارتی اثرات پھیلانے والا سب سے بڑا منصوبہ اوبور ہے جس کو چینیوں نے سپانسر کرنا شروع کر دیا ہے۔

مزید :

کالم -