عوام دشمن بجٹ منظور نہیں  ہونے دیا  جائے گا  ، پارلیمان کے اندر اور باہر مزاحمت کی جائے گی:متحدہ اپوزیشن کا اعلان

عوام دشمن بجٹ منظور نہیں  ہونے دیا  جائے گا  ، پارلیمان کے اندر اور باہر ...
عوام دشمن بجٹ منظور نہیں  ہونے دیا  جائے گا  ، پارلیمان کے اندر اور باہر مزاحمت کی جائے گی:متحدہ اپوزیشن کا اعلان

  

اسلام آباد(صباح نیوز) متحدہ اپوزیشن نے اعلان کیا ہے کہ  عوام دشمن بجٹ منظور نہیں  ہونے دیا  جائے گا ،عوام دشمن بجٹ کے خلاف پارلیمان کے اندر اور باہر مزاحمت کی جائے گی،عوام دشمن بجٹ کے احتجاج کے تمام ذرائع بروئے کارلائے جائیں گے ،اطلاعات کی ترسیل میں  رکاوٹیں پیدا کی جارہی ہیں،مولانا فضل الرحمن سے گزارش   کی گئی ہے وہ جلد اے پی سی کی تاریخ کا اعلان کریں،سیاسی مخالفین  کیخلاف ایک  خاص ایجنڈے  کے تحت دباؤ کو برداشت نہیں کیا جائے گا،گرفتار ہونے والے قائدین اور کارکنان سے یکجہتی  کا اظہار کرتے ہیں۔

پارلیمینٹ میں اپوزیشن  جماعتوں کی مشترکہ  پارلیمانی پارٹی کا  منگل کو اہم  اجلاس ہوا، اعلامیہ کے مطابق  اجلاس میں مشاورت سے وفاقی بجٹ سے متعلق اصولی فیصلے کیے گئے ۔ موجودہ حکومت جائز عوامی  و جمہوری اور دستوری مینڈیٹ  سے محروم ہے ۔ حکومت نے قومی ، عوامی مفادات کو عالمی مالیاتی اداروں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا ہے ،ملکی معیشت آئی ایم ایف کے سپرد کردی گئی ہے۔ اعلامیہ میں مزید کہا گیا ہے کہ مینڈیٹ چور حکومت نے بجٹ تیاری بھی آئی ایم ایف کے حوالے کردی ہے ۔ قومی سلامتی   سے جڑی معیشت  اہم معاشی و مالیاتی اداروں کو آئی ایم ایف کے حوالے کردیا گیا۔یہ عمل قومی خودمختاری، سلامتی ، عوامی مفادات پر ہتھیارڈالنے  کے مترادف ہے ۔ اجلاس میں واضح کیا گیا کہ عوام دشمن بجٹ منظور نہیں  ہونے دیا  جائے گا ۔ عوام دشمن بجٹ کے خلاف پارلیمان کے اندر اور باہر مزاحمت کی جائے گی۔عوام دشمن بجٹ کے احتجاج کے تمام ذرائع بروئے کارلائے جائیں گے ، مشترکہ اپوزیشن  نے مطالبہ کیا کہ عوام دوست بجٹ پیش کیا جائے اگر عوام دوست بجٹ پیش کیا گیا تو ہم اسے خود منظورکرائیں گے۔ اسپیکر قومی اسمبلی دستور کے تقاضوں کے تحت آئینی و جمہوری ذمہ داریاںپوری کریں ، آصف  زرداری ، سعد رفیق ، محسن داوڑ ، علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر فی الفور  جاری کیے ج ائیں ، تمام گرفتار ارکان کی ایوان میں حاضری کو یقینی بنایا جائے۔ نواب شاہ، لاہور، شمالی وزیرستان کے عوام کی نمائندگی ایوان میں نہیں ہورہی یہ جمہوری روح اور قواعد کے منافی ہے۔ اجلاس میں ملک میں آئینی  ،قانونی، بنیادی انسانی معاشی حقوق کی صورتحال پر گہری تشویش کا اظہار کیا گیا۔ ملکی تاریخ میں ایسی قدغنیں پہلے دیکھنے میں نہیں آئیں ۔ ایک  طرف عدلیہ پر حملہ تو دوسری جانب عوام کے بنیادی انسانی حقوق کو پامال کیا جارہا ہے ۔ اطلاعات کی ترسیل میں  رکاوٹیں پیدا کی جارہی ہیں۔ دستور قانون جمہوریت کے مطابق عوامی حقوق کے خلاف ہتھکنڈوں  کا مقابلہ کیا جائے گا۔ مولانا فضل الرحمن سے گزارش   کی گئی ہے وہ جلد اے پی سی کی تاریخ کا اعلان کریں ۔ سیاسی مخالفین  کیخلاف ایک  خاص ایجنڈے  کے تحت دبائو کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔ گرفتار ہونے والے قائدین اور کارکنان سے یکجہتی  کا اظہار کرتے ہیں

مزید : قومی