ناجائز تعمیرات کیخلاف ویجیلنس کمیٹیاں فعال کی جار ہی ہے:ناصر شاہ

ناجائز تعمیرات کیخلاف ویجیلنس کمیٹیاں فعال کی جار ہی ہے:ناصر شاہ

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)صوبائی وزیر اطلاعا ت، بلدیات، ہاؤسنگ ٹاؤن پلاننگ، مذہبی امور، جنگلات و جنگلی حیات سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ ناجائز تعمیرات کی بیخ کنی کا حتمی فیصلہ کرلیا گیا ہے اورکسی بھی صورت انسانی زندگیوں کو داو پر لگانے والوں کو معاف نہیں کیا جائے گاشہر کا نقشہ برباد کرنے کی ہر کوشش کو ناکام بنادیا جائے گا، وزیراعلی سندھ نے ایس بی سی اے کو ناجائز تعمیرات کرنے والوں کے خلاف سخت ایکشن کا حکم دیا ہے اور اس سلسلے میں ویجیلنس کمیٹیاں فوری طور پر فعال کی جارہی ہیں اس بات کا اظہار انہوں نے آج اپنے ایک بیان میں کہی سیدناصر حسین شاہ نے مزید کہا کہ بورنگ کے بڑھتے ہوئے رجحان کو روکنے کے لئے واٹر بورڈ کو ہدایات دی گئی ہیں جب کہ شہر کی ہر مخدوش عمارت کو خالی کروانے کے احکامات دئیے گئے ہیں ناجائز تعمیرات مافیا کے خلاف ایس بی سی اے ایف آئی آر کا اندراج کروائے گی سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ ناجائز تعمیرات کو لو گو ں نے اپنا حق سمجھ لیا ہے اور چند عنا صر شہر میں نا جا ئز منا فع کما کر شہر کرا چی کو تباہ کر رہے ہیں اور شہر کا نقشہ بگا ڑ رہے ہیں جس پرناجائز تعمیرات میں ملوث افراد کی بیخ کنی کا حتمی فیصلہ کر لیا گیا ہے۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ انسانی زندگیوں کو داؤ پر لگانے والوں کو ہر گز معاف نہیں کیا جائے گااور شہر کا نقشہ برباد کرنے کی ہر کوشش کو ناکام بنادیا جائے گا۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ کراچی میں عما ر ت گرنے کے واقعات تواتر کے ساتھ روا ں سا ل میں ہو ئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کراچی میں کچھ تعمیرات ایسی ہیں جو کہ پاکستان بننے سے پہلے کی ہیں اور ان کی حالت بہت مخدوش ہے ان میں لوگ پگڑی سسٹم کے تحت رہائش پذیر ہیں انہیں نو ٹسسز بھی جاری کئے گئے ہیں لیکن وہا ں کے مکین اپنی رہائش خا لی کر نے سے انکا ر ی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے لئے الگ کورٹس کا قیام غیر قانونی تعمیرات کا قلع قمع کرنے میں مددگار ثابت ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ سندھ میں غیر قانونی طور پر تعمیرات میں ملوث سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے افسران و اہلکاروں کے خلاف بھی قانونی کاروائی کی جائے گی۔ صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ اس وقت کراچی میں 422 تعمیرات ایسی ہیں جو کہ مخدوش حالت میں ہیں اور کسی بھی وقت کوئی ناخوشگوار واقعہ رونما ہوسکتا ہے لہذا مخدوش عمارتوں کے رہائشیوں کو چاہیئے کہ وہ عمارت فی الفور خالی کر دیں۔

مزید :

صفحہ اول -