بجٹ 2020-21 میں کوئی نیا ٹیکس لگایا جائے گا ؟ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں بڑا فیصلہ کر لیا گیا

بجٹ 2020-21 میں کوئی نیا ٹیکس لگایا جائے گا ؟ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں بڑا فیصلہ ...
بجٹ 2020-21 میں کوئی نیا ٹیکس لگایا جائے گا ؟ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں بڑا فیصلہ کر لیا گیا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن )وفاقی کابینہ نے بجٹ تجاویز کو منظور کر لیاہے جس کے بعد کچھ ہی دیر میں بجٹ قومی اسمبلی میں پیش کیا جائے گا تاہم اس سے قبل اہم خبر یہ ہے کہ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں کوئی نیا ٹیکس نہ لگانے کا فیصلہ کیا گیاہے ۔

نجی ٹی وی دنیا نیوز نے ذرائع کے حوالے سے کہاہے کہ اس سال کوئی نیا ٹیکس نہیں لگایا جائے گا بلکہ اسے گزشتہ سال کی سطح پر برقرار رکھی جائے گی ۔اس کے علاوہ حکومت نے تنخواہوں اور پنشن میں بھی اضافہ نہ کرنے کا فیصلہ کیاہے ۔

مالی سال 21-2020 کا بجٹ ا?ج قومی اسمبلی میں پیش کیا جائے گا، وفاقی وزیر حماد اظہر بجٹ پیش کریں گے۔ بجٹ دستاویزات کے مطابق وفاقی بجٹ کا حجم 7600 ارب روپے رکھا گیا ہے۔

سود اور قرضوں کی ادائیگی پر 3235 ارب روپے خرچ ہوں گے۔ دفاع کے لیے 1402 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز ہے۔ ٹیکس آمدن کا ہدف 4950 ارب روپے رکھا گیا ہے جبکہ سود اور قرضوں کی ادائیگی پر 3235 ارب روپے خرچ ہوں گے۔پنشن کے لیے 475 ارب روپے رکھے جائیں گے۔ بجٹ تجاویز کے مطابق وفاقی وزارتوں اور محکموں کے لیے 495 ارب روپے کا بجٹ مختص کیا گیا ہے، وفاقی حکومت سبسڈی پر 260 ارب روپے خرچ کرے گی۔ وفاق کا ترقیاتی بجٹ 650 ارب روپے رکھا جائے گا۔

دوسری جانب آئی ایم ایف کی جانب سے تمام شعبوں پر سیلز ٹیکس کی چھوٹ ختم کرنے پر زور دیا گیا ہے۔ نان فائلرز کیلئے ٹیکس کی شرح میں اضافے کا امکان ہے اور ان کے لیے جی ایس ٹی کی شرح بھی 17 فیصد سے بڑھانے کی تجویز ہے۔ تنخواہ دار طبقے کے لیے انکم ٹیکس میں کسی رعایت کا امکان نہیں۔

مزید :

قومی -