دوسری جنگ عظیم کی یادگاری تقریب،جاپان کی حکومت نے57 سال بعد ایسا کام کرنے کا اعلان کر دیا کہ آپ بھی حیران رہ جائیں گے

دوسری جنگ عظیم کی یادگاری تقریب،جاپان کی حکومت نے57 سال بعد ایسا کام کرنے کا ...
دوسری جنگ عظیم کی یادگاری تقریب،جاپان کی حکومت نے57 سال بعد ایسا کام کرنے کا اعلان کر دیا کہ آپ بھی حیران رہ جائیں گے

  

ٹوکیو(ڈیلی پاکستان آن لائن)نوول کروناوائرس کے پھیلا ؤ کو روکنے کے لئے جاپان میں دوسری جنگ عظیم کی اگست میں ہونیوالی سالانہ یادگاری تقریب کو بڑے پیمانے پر محدود کیا جائیگا۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق جاپان کے وزیرصحت  کاٹو کاٹسونوبو نے ایک پریس بریفنگ کے دوران بتایا کہ یہ تقریب 15 اگست کو ٹوکیو کے نیپون بڈوکان ہال میں ہو گی لیکن شرکا کی تعداد میں گزشتہ سال کی نسبت 80 فیصد کمی کی جائیگی۔وزیرصحت نے کہا کہ رواں سال دوسری جنگ عظیم میں جاپان کے ہتھیار ڈالنے کی 75 ویں سالگرہ کے موقع پر منعقد کی جانیوالے تقریب میں گزشتہ سال کے 6 ہزار 200 شرکا کے مقابلے میں صرف 1 ہزار 400 افراد شرکت کر سکیں گے اور 1963 کے بعد یہ پہلا موقع ہو گا جب یادگاری تقریب کو محدود کیا جائیگا۔ریاستی سرپرستی میں خدمات کیلئے سوگوار خاندانوں کے نمائندوں میں 50 افراد فی پریفکچر(ضلع)میں 22 افراد کی کٹوتی کی جائیگی۔ کسی بھی شخص کو اپنے خرچہ پر ایونٹ میں شرکت کی اجازت نہیں ہوگی۔

وزارت نے کہا کہ شرکا میں ہونیوالی وسیع پیمانے پر کمی کے ساتھ لوگوں کو اپنا جسمانی درجہ حرارت بھی چیک کرانا ہوگا، انہیں اپنے ہاتھوں کو صاف کرنے، ہال میں ایک میٹر کے فاصلے پر بیٹھنے اور چہرے پر ماسک پہننے کو بھی کہا جائیگا۔وزارت نے کہا کہ اس کے علاوہ تقریب کے دوران جاپان کا قومی ترانہ گانے کو ختم کر دیا گیا ہے اور اس کی جگہ ایک میوزیکل پرفارمنس دکھائی جائے گی۔کاٹو نے پریس بریفنگ میں بتایا کہ ہم تقریب کے انعقاد کیلئے ہر ممکن وسائل اپنائیں گے۔ وزارت اس امکان کو مسترد نہیں کرتی کہ جاپان میں نوول کرونا وائرس کے کیسز دوبارہ آنے شروع ہوئے تو اس تقریب کو مزید محدود کیا جا سکتا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -