ہاولپور، نوجوان اغواء، قتل، لاش چھ روز بعد برآمد، تفتیشی افسر کی ملزموں سے ڈیل، ملزم آزاد ورثاء کو سنگین نتائج کی دھمکیاں 

ہاولپور، نوجوان اغواء، قتل، لاش چھ روز بعد برآمد، تفتیشی افسر کی ملزموں سے ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


 بہاولپور(ڈسٹرکٹ بیورو) تھانہ صدر کی حدود بستی بھاراں جھا(بقیہ نمبر27صفحہ6پر)
نگی والا کے رہائشی محمد مختیار نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ خاندانی دشمنی پر ملزمان نے میرے 25 سالہ بیٹے دلاور کو اغوا کیا بدترین تشدد کرتے رہے اور قتل کردیا 6دن بعد نعش برآمد ہوئی، ملزمان گلزار،خلیل،اجمل عرف گڈا،سہیل عرف ماڈل،عون عرف نوری کیخلاف اغوا کا مقدمہ درج ہوا اور بعد میں قتل کی دفعات شامل ہوئی،ہماری نشان دہی پر ملزمان کے گھروں میں چھاپے مارے گئے نعش برآمد ہوئی، کچھ ملزمان گرفتار ہوئے،ملزم اجمل عرف گڈا کے گھر سے بھاری مقدار میں آئس،چرس افیون بھی برآمد ہوئی،ملزم اجمل عرف گڈا پر چرس ڈال کر 9 سی کا مقدمہ درج ہوا، لاکھوں روپے کی آئس اور افیون کہاں گئی کچھ پتہ نہیں تفتیشی افسر الیاس سب انسپکٹر گرفتار ملزمان کو بھاری رشوت کے عوض ساز باز اور ریلیف دینے لگا جبکہ اصل ملزمان خلیل، سلیم اور سجاول کو گرفتار کرنے سے گریزاں ہے۔ملزمان دندناتے پھررہے ہیں الٹا ہمیں سنگین نتائج کی دھمکیاں دے رہے ہیں،محمد مختیار نے وزیر اعلی پنجاب،آئی جی پنجاب،آر پی او بہاولپورسے شفاف تحقیقات اور اصل ملزمان کو کیفر کردار تک پہنچانے کی اپیل کی ہے جبکہ ترجمان بہاولپور پولیس نے آپنے موقف میں کہا کہ تھانہ صدر میں درج قتل کے مقدمہ کی تفتیش بالکل میرٹ پر ہو رہی یے۔ حقائق یہ ہیں کہ اس مدعی محمد مختیار پر تھانہ عباسنگر میں 324 اقدام قتل کا مقدمہ درج ہے جس میں یہ ملزم ہے۔ تھانہ صدر کے مقدمہ میں مدعی محمد مختیار تھانہ عباسنگر میں درج مقدمہ کے مدعی کو پریشرائز کرنا چاہتا ہے اور انکو اس قتل کے مقدمہ میں نامزد کروانا چاہتا ہے۔ تھانہ صدر بہاولپور کے مقدمہ کے اصل ملزمان چالان ہو چکے ہیں اور قانون کے مطابق کارروائی کی جاری ہے۔ ملزم اجمل گڈا پر 9سی کی ایف آئی آر بھی درج ہوچکی تھی جس میں بھی وہ چالان ہوچکا ہے۔