گیس منصوبہ جاری سرحد محفوظ تجارت میں اضافہ نواز شریف کے دورہ ایران میں اہم فیصلے

گیس منصوبہ جاری سرحد محفوظ تجارت میں اضافہ نواز شریف کے دورہ ایران میں اہم ...

         تہران( اے این این ) پاکستان اور ایران نے گیس پائپ لائن منصوبہ جاری رکھنے اور سرحدی تحفظ کو یقینی بنانے پر اتفاق کر لیاہے اوردونوں ملکوں کا باہمی تجارتی حجم سالانہ5ارب ڈالر تک لے جانے کا فیصلہ کیا گیا ہے،ایرانی صدر نے دورہ پاکستان کیلئے نواز شریف کی دعوت قبول کر لی ۔تفصیل کے مطابق اتوار کو اپنے پہلے دو روزہ سرکاری دورے پر تہران پہنچنے کے بعد وزیر اعظم نواز شریف نے ایران کے صدر حسن روحانی سے ملاقات کی جس میںدو طرفہ تعلقات اور باہمی دلچسپی کے امور سمیت خطے کی صورتحال،اہم علاقائی اور عالمی معاملات پر تبادلہ خیالات کیا گیا۔دونو ں رہنماﺅں نے دونوں ملکوں کے درمیان تجارت کا حجم 5ارب ڈالر تک لے جانے کے عزم کا اظہار کیا۔ دونوں رہنماﺅں نے پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبے پر بھی تبادلہ خیال کیا اور اس منصوبے کو جاری رکھنے پر اتفاق کیا۔ وزیراعظم نواز شریف نے کہا کہ پاکستان ایران کے ساتھ تعلقات کے نئے باب کا آغاز کرنا چاہتا ہے۔انہوں نے ایران کے صدر کو دورہ پاکستان کی دعوت بھی دی جو انہوں نے قبول کرلی۔ دونوں رہنماﺅں نے سرحدی تحفظ کے معاملے پر تبادلہ خیالات کیا اور اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ باہمی تجارت کے فروغ کیلئے پاک ایران سرحد کو محفوظ بنایا جائے گا اور اس مقصد کیلئے دونوں اطراف سے موثر اقدامات کئے جائیں گے۔

نواز شریف نے کہا کہ بعض شرپسند عناصر پاکستان اور ایران کے تعلقات کو متاثر کرنا چاہتے ہیں، ہم کسی کواس کی اجازت نہیں دینگے اور تعلقات خراب کرنے کی کوشش کرنے والوں سے سختی سے نمٹیں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ترقی کی خاطر امن اور امن کیلئے ترقی کا خواہشمند ہے۔ میرے دورے کا مقصد ایران کے ساتھ تعلقات کے نئے دور کا آغاز کرنا ہے۔

اس موقع پر حسن روحانی نے کہا کہ وزیراعظم نواز شریف کے دورے سے بھائی چارے پر مبنی تعلقات مزید وسیع ہونگے۔ پاکستان اور ایران کے تعلقات تاریخ کے گہرے رشتے میں منسلک ہیں۔ ایران پاکستان میں امن اور ترقی کیلئے ہر ممکن تعاون فراہم کرے گا اور خطے میں امن کیلئے بھرپور کردار ادا کرے گا۔اس موقع پر وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار، وزیراعظم کے مشیر برائے قومی سلامتی و خارجہ امور سرتاج عزیز، وزیر پٹرولیم شاہد خاقان عباسی، وزیراعظم کے معاون خصوصی طارق فاطمی، گورنر بلوچستان محمد خان اچکزئی اور ایران میں پاکستان کے سفیر نور محمد جادمانی بھی موجود تھے۔ قبل ازیں وزیراعظم نواز شریف سے ایران کے نائب صدر اسحاق جہانگیری نے بھی ملاقات کی جس میں باہمی تعلقات اور دوطرفہ تعاون سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیالات کیا گیا۔ نواز شریف سے ایران کے وزیر خزانہ علی طیب نیا نے بھی ملاقات کی اور دونوں ملکوں کے درمیان اقتصادی تعاون کے معاملات پر بات چیت کی گئی۔ نواز شریف جب تہران پہنچے تو انہیں مسلح افواج کی جانب سے گارڈ آف آنر پیش کیا گیا اور سلامی دی گئی۔ ائیرپورٹ پروزیراعظم کا استقبال ایران کے وزیر خزانہ اور اعلیٰ حکام نے کیا۔وزیر اعظم کے وفد میںفاقی وزیرخزانہ اسحاق ڈار، وفاقی وزیر تجارت خرم دستگیر ، وفاقی وزیرپیٹرولیم شاہد خاقان عباسی، مشیر امور خارجہ سرتاج عزیز،گورنر بلوچستان محمد خان اچکزئی اور معاون خصوصی طارق فاطمی شامل ہیں۔

نواز شریف ایران

 

مزید : صفحہ اول