موجودہ حکومت نے بھی ماضی کی طرح مجرموں کو اتحادی بنا لیا:حافظ نعیم الرحمٰن

موجودہ حکومت نے بھی ماضی کی طرح مجرموں کو اتحادی بنا لیا:حافظ نعیم الرحمٰن

کراچی (اسٹاف رپورٹر) امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن نے کہا ہے کہ 12مئی کراچی کے شہریوں اور وکلاء برادری کے لیے تاریخ کا سیاہ ترین دن ہے، خواہ وہ 12مئی 2004ہو یا 12مئی 2007جب کراچی میں قتل وغارت کی گئی، تاریخ میں اس کی کوئی مثال نہیں ملتی، 12مئی 2007کو پرویز مشرف کی سرپرستی میں وکلاء سمیت 56افراد کو موت کے گھاٹ اتارا گیا جبکہ 12مئی 2004کو ضمنی انتخابات میں جماعت اسلامی کی جانب سے ایم کیو ایم کی دھاندلی اور پولنگ اسٹیشنوں پر قبضوں کو روکنے کی کوششوں پر جماعت اسلامی کے 9کارکنوں کو شہید کردیا گیا۔ سانحہ 12مئی کے مقتولین کے ورثاء کو آج تک انصاف نہیں مل سکا۔ ماضی کی حکومتوں نے سانحہ 12مئی کے مجرموں کو اپنے ساتھ حکومت میں شریک اقتدار کیا اور موجودہ حکومت نے بھی وہی طرز عمل اختیار کرتے ہوئے مجرموں اور قاتلوں کو اپنا اتحادی بنالیا ہے۔ شہداء کے ورثاء حکومت سے سوال کرتے ہیں کہ اقتدار میں آنے سے قبل تو آپ ورثاء کو انصاف فراہم کرنے کے بہت دعوے اور وعدے کرتے تھے مگر اقتدار میں آنے کے بعد 12مئی کے شہداء کو بھلا دیا گیا۔ حافظ نعیم الرحمن نے کہاکہ 12مئی 2007کو اس وقت کے وزیر داخلہ اور آج کے میئر وسیم اختر دہشت گردوں کے شانہ بشانہ تھے اور پرویز مشرف نے 56افراد کے قتل کے بعد رات کو اسلام آباد ایک جلسے سے خطاب کرتے ہوئے مکا لہرا کر اعلان کیا تھا کہ کراچی میں ہماری قوت اور طاقت کا مظاہرہ سب نے دیکھ لیا ہے۔ حافظ نعیم الرحمن نے کہاکہ اس سانحے کے حوالے سے درجنوں دہشت گرد اعتراف جرم کرچکے ہیں اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے پاس ان کے خلاف ٹھوس ثبوت اور شواہد بھی موجود ہیں لیکن اس کے باوجود تاحال کسی قاتل اور مجرم کو سزا نہیں دی گئی اور شہداء کے ورثاء آج بھی انصاف کے منتظر ہیں۔انہوں نے کہاکہ پیپلز پارٹی کو سندھ میں حکومت کرتے ہوئے تقریباً 20سال ہوگئے مگر بدقسمتی سے اس نے بھی کچھ نہیں کیا بلکہ مجرموں کو تحفظ دیا گیا۔ حافظ نعیم الرحمن نے کہاکہ کراچی میں مستقل اور پائیدار امن اور ترقی و خوشحالی کے لیے ضروری ہے کہ سیاسی مصلتحوں کو بالائے طاق رکھتے ہوئے دہشت گردوں اور مجرموں کو تحفظ دینے اور سیاسی چھتری فراہم کرنے کا عمل ختم کیا جائے اور قتل و غارت گری میں ملوث عناصر اور افراد خواہ ان کا تعلق کسی بھی پارٹی یا گروہ سے ہو ان کے خلاف کارروائی کی جائے۔ سانحہ 12مئی 2004،12مئی 2007، سانحہ بلدیہ فیکٹری اور سانحہ طاہر پلازہ سمیت کراچی میں ہونے والے ہزاروں قتل کے مجرموں کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جائے اور قرار واقعی سزاد ی جائے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر