پنجاب اسمبلی، کریمینل پروسیجر سمیت متعدد ترمیمی مسودات قوانین کثرت رائے سے منظور

پنجاب اسمبلی، کریمینل پروسیجر سمیت متعدد ترمیمی مسودات قوانین کثرت رائے سے ...

  

لاہور(این این آئی)پنجاب اسمبلی کے ایوان نے کریمنل پروسیجر،مجموعہ ضابطہ فوجداری اور دیہی پہنچائتیں، نیبر ہڈ کونسلیں 2020 ترمیمی مسودات قوانین کثرت رائے سے منظور کرلئے،اپوزیشن کی جانب سے پنجاب میں کرونا کے بڑھتے ہوئے کیسز پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت سے لاک ڈاؤن میں نرمی کے فیصلے پر نظر ثانی اور مکمل لاک ڈاؤن کرنے کا مطالبہ کردیا، محدود افراد کے ساتھ شادی بیاہ کی تقریبات کے انعقاداور کاروبار شام پانچ بجے بند کرنے کیلئے قانون سازی کا مطالبہ بھی کر دیا گیا۔پنجاب اسمبلی کااجلاس پینل آف چیئرمین میاں محمد شفیع کی زیر صدارت مقررہ وقت سے ایک گھنٹہ 17منٹ کی تاخیر سے شروع ہوا۔صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد نے وقفہ سوالات کے دوران بتایا کہ ہمارے پاس ٹیسٹ کرنے والی کٹس کی صلاحیت مختلف ہے جس سے سو فیصد درست نتائج آنا ناممکن ہے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت ڈاکٹرز کی بھرتی کے لئے بورڈز کے اجلاس منعقد کر رہی ہے، فیکلٹی کی تعداد کو پورا کرنے کیلئے بھرتی کا عمل جاری ہے۔انہوں نے کہا کہ 10ڈاکٹرز کی بھرتی پر کام ہو رہا ہے اور شاید ہی کوئی ڈاکٹر بے روزگار ہے گا۔وزیر انرجی ڈاکٹر اختر ملک نے نقطہ اعتراض پر بات کرتے ہوئے کہا کہ دنیا کو کورونا وباء کا پہلی مرتبہ سامنا کرنا پڑا ہے اس لئے کمی بیشی ہو جاتی ہے لیکن ہماری حکومت نے اس وباء کے پھیلاؤ کو روکنے اور اس کے تدارک کے لئے جو اقدامات کئے ہیں وہ بے مثال ہیں ۔ نکتہ اعتراض پر بات کرتے ہوئے رانا مشہود نے کہا کہ اساتذہ نے پنجاب اسمبلی کے باہر ہڑتال کرکے دھرنا دیا جس سے بات چیت کیلئے ایوان میں کمیٹی بنائی گئی تھی،حکومتی یقین دہانی پر پیف اور پنجاب ایجوکیشن مینجمنٹ اتھارٹی نے ہڑتال اور دھرنا ختم کیا،چار ماہ ہو گئے ہیں پیف اور پنجاب ایجوکیشن مینجمنٹ اتھارٹی کے ملازمین کو تنخواہ نہیں دی گئی۔ جس پر وزیر قانون راجہ بشارت نے پیف اور پیما کے مسائل کے حل کیلئے اپوزیشن کو یقین دہانی کروا دی۔کورونا وباء اور آئندہ مالی سال کے بجٹ پر عام بحث میں حصہ لیتے ہوئے حکومتی رکن اسمبلی احمد شاہ کھگہ نے کہا کہکورونا وائرس ہمیں اللہ کی طرف لے آیا ہے اور اس نے ہمیں اسلام سے قریب کر دیا، میری حکومت سے درخواست ہے شادی کی تقریبات کے حوالے سے قانون سازی کی جائے۔مسلم لیگ (ن) کے رکن اسمبلی سرداراویس لغاری ایوان نے کہا کہ پنجاب کے دیگر اضلاع اور ایکسپوسنٹر لاہور میں قرنطینہ سنٹرزمیں جوحالات ہیں وہ اس قابل نہیں ہیں جن کا یہاں تذکرہ کیاجائے،ملتان میں ڈاکٹرز کو کورونا ہواتو یاسمین راشد نے فون تک نہیں کیا، حکومت کورونا وائرس کے کنٹرول اور خاتمے کیلئے ابھی تک کوئی قومی پالیسی نہیں بنا سکی،سرکاری ڈیٹا بالکل غلط ہے کیونکہ ہر روز کورونا کیسز اوپر جارہے ہیں،اپیل کرتاہوں لاک ڈاؤن پر نظر ثانی کریں اورمکمل لاک ڈاؤن کی طرف جائیں۔رکن اسمبلی مولانا معاویہ اعظم نے خطاب کرتے ہوئے ایوان میں کہا کہ ریاست مدینہ کا نعرہ لگانے والی حکومت سے مطالبہ کروں گا کہ 2020-21کا بجٹ سود فری پیش کریں،سود کی وجہ ہمیں کورونا وائرس، بے موسمی بارشوں اور ٹڈی دل کے حملے جیسی آفتوں کا سامنا ہے، اگر یہی سلسلہ چلتا رہا تو ہمارے لئے روٹی پوری کرنا مشکل ہو جائے گا۔مسلم لیگ (ن) کے رکن خواجہ عمران نذیر نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اپوزیشن نے کورونا کے آغاز میں ہی تجاویز دینا شروع کر دی تھیں اس کے اثرات ملک بھر میں آئیں گے لیکن ہماری بات نہیں مانی گئی ،حکومت کورونا سے نمٹنے کی بجائے لیگی رہنماؤں پر کیس بنانے میں مصروف ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو ٹائیگر فورس نہیں بنانی چاہیے تھی۔حکمران جماعت کے رکن اسمبلی نذیر چوہان نے کہا کہ ختم نبوت ؐکے معاملے پر وزیر اعظم کو مس گائیڈ کیاجارہاہے،ان لوگوں کی نشاندہی کیلئے اعلی سطحی کمیٹی بنائی جائے۔انہوں نے کہا کہ کورونا میں جو بھی مرتا ہے وہ شہید ہے۔وقت ختم ہونے پرپنجاب اسمبلی کا اجلاس آج منگل صبح ساڑھے گیارہ بجے تک ملتوی ہوگیا۔

پنجاب اسمبلی

مزید :

صفحہ آخر -