دھان کی فی ایکڑ زیادہ پیداوار کیلئے حکمت عملی جاری

  دھان کی فی ایکڑ زیادہ پیداوار کیلئے حکمت عملی جاری

  

لاہور(لیڈی رپورٹر) دھان کی فی ایکڑ زیادہ پیداوار کیلئے کاشتکار 20 مئی سے قبل پنیری ہر گز کاشت نہ کریں۔محکمہ زراعت پنجاب کے مطابق پنجاب زرعی پیسٹ آرڈیننس 1959 ء کے تحت دھان کی پنیری کی کاشت 20 مئی سے قبل ممنوع ہے کیونکہ دھان کے تنے کی سنڈیاں موسم سرما مڈھوں میں سرمائی نیند سو کر گزارتی ہیں اور ان کے پروانے مارچ کے آخر اور اپریل کے شروع میں نکلتے ہیں اگر اس وقت پنیری کاشت کی گئی ہو تو پروانے اس پر انڈے دے کر اپنی نسل کا آغاز کر دیتے ہیں جو کہ علاقہ میں وبائی صورت بھی اختیار کر لیتے ہیں لہذٰا دھان کے کاشتکار قبل از وقت پنیری کی کاشت سے گریز کریں۔کاشتکار دھان کی زیادہ پیداوار کے لئے منظور شدہ اقسام کا بیج استعمال کریں اورفی ایکڑ زیادہ پیداوار کے لئے ترقی دادہ اور موٹی اقسام کے ایس282،نیاب اری9،اری6،کے ایس کے133 استعمال کریں۔

،کے ایس کے434 اور نیاب213 جبکہ باسمتی اقسام سپر باسمتی،باسمتی515،سپرگولڈ،سپر باسمتی2019،شاہین باسمتی،پی کے1121 ایرومیٹک،کسان باسمتی،چناب باسمتی،پنجاب باسمتی،نیاب باسمتی2016 اور نور باسمتی فائن کے علاوہ غیر باسمتی قسم پی کے386 اور منظور شدہ ہائبرڈ اقسام کے بیج کاا نتظام کریں۔ترجمان نے مزید بتایاکہ کاشتکار دھان کی ان منظور شدہ اقسام کے علاوہ ممنوعہ اقسام ہر گز کاشت نہ کریں۔

مزید :

کامرس -