’کبھی بھی اپنی کمر مالکن کی جانب کرنے کی اجازت نہ تھی‘ سعودی شہزادی کی اسسٹنٹ کی نوکری کرنے والی خاتون نے سعودی شہزادیوں کی عادات بے نقاب کردیں

’کبھی بھی اپنی کمر مالکن کی جانب کرنے کی اجازت نہ تھی‘ سعودی شہزادی کی ...
’کبھی بھی اپنی کمر مالکن کی جانب کرنے کی اجازت نہ تھی‘ سعودی شہزادی کی اسسٹنٹ کی نوکری کرنے والی خاتون نے سعودی شہزادیوں کی عادات بے نقاب کردیں

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) ریاض میں سعودی شہزادی کی پرسنل اسسٹنٹ رہنے والی ایک مغربی خاتون نے شہزادیوں کی عادات کے متعلق ایسا انکشاف کیا ہے کہ ہر سننے والا دنگ رہ گیا۔ میل آن لائن کے مطابق کیتھرین کولمین نامی اس خاتون نے دی ٹائمز کے لیے لکھے گئے آرٹیکل میں بتایا ہے کہ ”مجھے ریاض میں ایک سعودی شہزادی کی پرسنل اسسٹنٹ کی نوکری کی پیشکش ہوئی۔ میں زندگی میں کچھ ایڈونچر چاہتی تھی اور پھر تنخواہ بھی بہت زیادہ تھی چنانچہ میں نے پیشکش قبول کر لی اور سعودی عرب چلی گئی۔ وہاں جاتے ہی مجھے چار صفحات پر مشتمل ایک دستاویز تھما دی گئی جس پر پروٹوکولز لکھے ہوئے تھے۔ اس پر یہ بھی لکھا تھا کہ کبھی بھی شہزادی کی طرف پشت کرکے کھڑے نہیں ہونا اور جب دیگر ملازمین پرسزا کے طور پر جسمانی تشدد کیا جا رہا ہو تو وہیں کھڑے رہنا ہے۔“

کیتھرین لکھتی ہے کہ ”مجھے اندازہ نہیں تھا کہ سعودی عرب پہنچ کر مجھے ایسے ظالمانہ روئیے کا سامنا کرنا پڑے گا اور لوگوں کو بری طرح اپنی آنکھوں کے سامنے پٹتے ہوئے دیکھنا پڑے گا۔ شاہی خاندان کے لوگ بہت ظالم تھے، وہ اپنے ملازمین پر بہیمانہ تشدد کرتے تھے اور انہیں جانوروں کے ناموں سے پکارتے تھے۔شہزادیاں ملازموں کو اپنے کمرے کا کچرا بھی اپنی اجازت کے بغیر باہر نہیں لیجانے دیتیں۔ ہر ملازم کے لیے پروٹوکولز طے تھے اور جو اس سے روگردانی کرتا تھا اس پر تشدد کیا جاتا تھا۔“

کیتھرین نے مزید لکھا ہے کہ” میرے پروٹوکولز میں شہزادی کی طرف کبھی بھی پشت نہ کرنے کے علاوہ یہ لکھا تھا کہ میں کبھی بھی شہزادی سے بحث نہیں کروں گی، حتیٰ کہ وہ غلط ہی کیوں نہ ہو، میں شہزادی کے زیادہ قریب آنے کی کوشش نہیں کروں گی اور دیگر سٹاف میں بھی کسی کو دوست نہیں بناﺅں گی۔“ کیتھرین لکھتی ہے کہ مجھے رات کے 4بجے تک کام کرنا پڑتا تھا۔ میں شہزادی کا باتھ روم صاف کرتی تھی اور اس کے کپڑے دھوتی تھی۔ وہ ایک دن میں 5لباس تبدیل کرتی تھی اور مجھے روزانہ پانچ لباس دھونے پڑتے تھے۔“ واضح رہے کہ کیتھرین نے صرف 3ماہ کے لیے یہ نوکری کی اور پھر چھوڑ کر واپس اپنے ملک چلی گئی تھی۔

مزید :

بین الاقوامی -