فلسطین مسلمانوں کے باہمی تعاون کا مرکز ہونا چاہیے،جواد نقوی

        فلسطین مسلمانوں کے باہمی تعاون کا مرکز ہونا چاہیے،جواد نقوی

  

لاہور(نمائندہ خصوصی)غاصب صہیونی ریم کے مقابلے میں فلسطینی استقامتی محاذ کی توانائیوں میں اضافہ اس ناسور کے جلد خاتمے کی نوید ہے ان خیالات کا اظہار مجمع المدارس تعلیم الکتاب والحکمہ اور تحریک بیداری امت مصطفی کے سربراہ سید جواد نقوی نے اجتماع سے خطاب میں کیا۔ انکا کہنا تھا کہ آج فلسطینیوں کو نصرت خداوندی اور حتمی فتح کا یقین رکھنا چاہئے،فلسطین مسلمانوں کے باہمی تعاون کا مرکزہونا چاہیے،،ان کا مزید کہنا تھا کہ ان حالات میں مسلمان ممالک کی ہم آہنگی اور باہمی تعاون کا مرکز مسئلہ فلسطین کو ہونا چاہئے چونکہ قدس شریف کے محور پر مسلمانوں کی ہم آہنگی اور تعاون صیہونی دشمن اور اس کے حامی امریکا اور یورپ کے لئے وحشتناک ہے. سینچری ڈیل کی ناکامی اور اس کے بعد غاصب حکومت کے ساتھ چند کمزور عرب حکومتوں کے روابط کی بحالی اسی حقیقت سے فرار کی ناکام کوشش ہے جو کارگر نہیں ہوں گی.انہوں مسلم اقوام، حکام، روشن فکر دانشور، علمائے دین، جماعتوں، تنظیموں، غیور نوجوان اور دیگر طبقات، سے اپیل کی کہ فلسطینیوں کی حمایت میں اپنے اپنے طور پر اس ہمہ گیر تحریک میں شامل اور سرگرم ہو جائیں چونکہ صیہونی حکومت اس علاقے کے لئے ایک مہلک اضافہ اور سراپا نقصان ہے جو بلا شبہ ختم اور نابود ہو جائے گی اور ان لوگوں کے ہاتھ صرف ذلت اور بدنامی لگے گی جنہوں نے اپنے تمام وسائل اس استکباری سیاست کے لئے وقف کر رکھے ہیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -