سی این جی سیکٹر کی بندش سے پنجاب میں دو لاکھ افراد بیروزگار ہوجائیں گے

سی این جی سیکٹر کی بندش سے پنجاب میں دو لاکھ افراد بیروزگار ہوجائیں گے
سی این جی سیکٹر کی بندش سے پنجاب میں دو لاکھ افراد بیروزگار ہوجائیں گے

  


لاہور (ویب ڈیسک) ملک میں گیس کے بحران کی وجہ سے پنجاب میں آئندہ چار ماہ تک سی این جی سیکٹر کو بند رکھنے کے حکومت کے فیصلے سے پنجاب میں 2300 سی این جی بند ہوجائیں گے جبکہ دو لاکھ افراد بیروزگار ہوجائیں گے۔ 18 ویں آئینی ترمیم کے بعد گیس کے بحران میں سب سے زیادہ پنجاب متاثر ہوا ہے، گیس پیداکرنے والے صوبوں سندھ، خیبرپختونخوا اور بلوچستان کو آئینی تقاضوں کے تحت ترجیحی بنیادوں پر گیس فراہم کی جارہی ہے۔

رپورٹ کے مطابق پنجاب میں سی این جی سٹیشنوں کی کل تعداد 2300 ہے جن پر دو لاکھ سے زائد افراد کام کرتے ہیں، اس سیکٹر میں سرمایہ کاری کا حجم 350 ارب روپے ہے۔ پنجاب میں 27 لاکھ پبلک ٹرانسپورت اور نجی گاڑیاں سستے فیول سی این جی سی چلتی ہیں، چار ماہ تک سی این جی بند ہونے سے متوسط طبقہ اس سستے فیول سے محروم ہوجائے گا اور اسے مہنگے پٹرول پر انحصار کرنا پڑے گا۔ سی این جی سیکٹر کو گیس کی فراہمی بند ہونے سے حکومت کا پٹرول کا امپورٹ بل بھی لاکھوں ڈالر میں بڑھ جائے گا اور ٹرانسپورٹ کرائے بھی بڑھ جائیں گے۔

مزید : بزنس


loading...