بجلی چوری میں ملوث اہلکار برطرف کریں تو عدالتیں بحال کردیتی ہیں، عابد شیر

بجلی چوری میں ملوث اہلکار برطرف کریں تو عدالتیں بحال کردیتی ہیں، عابد شیر
بجلی چوری میں ملوث اہلکار برطرف کریں تو عدالتیں بحال کردیتی ہیں، عابد شیر

  

اسلام آباد (ویب ڈسک) قومی اسمبلی قائمہ کمیٹی برائے حکومتی یقین دہانی نے واپڈا ملازمین کی کرپشن پر سخت قوانین بنائے جانے کی سفارش کرتے ہوئے کہا ہے کہ واپڈا ملازمین کو دئیے جانے والے فری یونٹس کو یکمشت کیا جائے، واپڈا ملازمین اپنی فری یونٹس تجارتی مقاصد کیلئے بیچ دیتے ہیں، کمیٹی کو بتایا گیا کہ مردم شماری کے بغیر قومی اسمبلی اور سینٹ میں اقلیتوں کی نشستوں میں اضافہ ممکن نہیں، اجلاس چیئرمین کمیٹی افضل کھوکھر کی زیر صدارت ہوا۔

کمیٹی اراکین نے مطالبہ کیا کہ بجلی چوری میں ملوث واپڈا اہلکاروں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے، کمیٹی بریفنگ دیتے ہوئے وزیر مملکت عابد شیر علی نے بتایا کہ موجودہ قوانین کے تحت فوری ایسا ممکن نہیں کہ واپڈا اہلکاروں کی طرف سے بجلی یونٹس فروخت کرنے سے متعلق کیا کارروائی کی جائے کیونکہ اس ضمن میں مختلف مزدور یونٹوں اور لیبر قوانین آڑے آنیکا خطرہ ہے۔ انہوں نے بتایا کہ قومی اسمبلی اور سینٹ قائمہ کمیٹی پانی وبجلی کے ذریعے قانون میں تبدیلی کیلئے اقدامات اٹھائے جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ یہ درست ہے کہ واپڈا ملازمین فری یونٹس کو کمرشل مقاصد کیلئے فروخت کرتے ہیں لیکن جب ہم ان کرپٹ ملازمین کے خلاف کارروائی کرتے ہیں تو یہ عدالتوں میں چلے جاتے ہیں اور عدالتیں انہیں بحال کردیتی ہیں، وزیر مملکت نے کہا کہ سپریم کورٹ سے اپیل ہے کہ وہ ماتحت عدالتوں کو حکم دیں کہ وہ کرپٹ ملازمین کو حکم امتناعی نہ دیں، وفاقی وزیر امور کشمیر برجیس طاہر کی طرف سے قومی اسمبلی میں اقلیتوں کیلئے مخصوس نشستوں میں اضافے کیلئے بل پر کمیٹی کو ایڈیشنل سیکرٹری وزارت قانون نے بتایا کہ مردم شماری کے بغیر قومی اسمبلی اور سینٹ میں اقلیتوں کی نشستوں میں اضافہ ممکن نہیں۔

مزید :

قومی -