آئین کی اسلامی دفعات میں ترمیم یا خاتمہ کی باتیں قابل مذمت ہیں،طاہر اشرفی

آئین کی اسلامی دفعات میں ترمیم یا خاتمہ کی باتیں قابل مذمت ہیں،طاہر اشرفی

  

لاہور(نمائندہ خصوصی)قانون توہین رسالتؐ اور آئین کی اسلامی دفعات میں ترمیم یا خاتمہ کی باتیں وقت کا ضیاع ہے۔پاکستانی قوم آئین پاکستان میں موجود ان ترامیم اور قوانین کی محافظ ہے۔ قادیانی پاکستان میں اہم ترین مناسب پر موجود ہیں۔قادیانیوں کی کالونیوں میں پولیس بھی داخل نہیں ہوسکتی ۔ہمارا مطالبہ یہ ہے کہ قادیانی مسلمانوں کی طرح آئین اور قانون کا احترام کریں ۔ یہ بات پاکستان علماء کونسل کے مرکزی چیئرمین اور وفاق المساجد پاکستان (رجسٹرڈ) کے صدر حافظ محمد طاہر محمود اشرفی برطانیہ میں علماء کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کہی۔ان کے ہمراہ مرکزی سیکرٹری جنرل صاحبزادہ زاہد محمود قاسمی بھی موجود تھے۔حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے کہا کہ بعض عناصر بلاجواز توہین ناموس رسالتؐ قانون کے خلاف پروپیگنڈہ کرتے ہیں ۔اس قانون کی وجہ سے رمشاء مسیح سمیت بہت ساری جانیں محفوظ ہوئی ہیں۔جہاں تک تحفظ ناموس رسالتؐ کے غلط استعمال کی بات ہے تو علماء اسلام نے ہمیشہ اس قانون کے غلط استعمال کر نے والوں کی مخالفت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ علماء اسلام کی ذمہ داری ہے کہ وہ شام،عراق،فلسطین،کشمیر اور ہندوستان میں مسلمانوں پر ہونے والے مظالم کو دنیا کے سامنے بیان کریں۔ سعودی عرب میں بد امنی اور خوف پھیلانے کی کوششیں کرنے والے مسلمانوں کو ان کے مراکز سے دور کرنا چاہتے ہیں لیکن ایسا نہیں ہونے دیا جائے گا۔ اس موقع پر مولانا قاری محمد طیب عباسی،مولانا امدادالحسن نعمانی،صاحبزادہ آصف نعمانی،مولانا مسعود الحسن ،لامحمود خوشی،مولانا عبد اللہ ،مولانا اکرام الحق،حاجی رفیق اور محمد ذوالفقار نے بھی خطاب کیا۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -