نوجوان محبوبہ کے گھر قتل، لاش تیزاب سے مسخ کرکے ٹکڑے صحن میں دبادئیے گئے، ڈھانچہ برآمد

نوجوان محبوبہ کے گھر قتل، لاش تیزاب سے مسخ کرکے ٹکڑے صحن میں دبادئیے گئے، ...
 نوجوان محبوبہ کے گھر قتل، لاش تیزاب سے مسخ کرکے ٹکڑے صحن میں دبادئیے گئے، ڈھانچہ برآمد

ماموں کانجن(ویب ڈیسک) دو ماہ قبل اغوا ہونے والے نوجوان کی نعش کی باقیات محبوبہ کے گھر سے برآمد گئیں، لواحقین نے پولیس کی مبینہ غفلت پر احتجاج کیا ہے۔نواحی گاﺅں 551 گ ب کا رہائشی مظہر اقبال 9 ستمبر 2017ءکو غائب ہوگیا تو لواحقین نے دوسرے روز 10 ستمبر کو اس کی گمشدگی کی اطلاع مقامی تھانہ میں کرتے ہوئے اس کی مبینہ آشنا رابی بی بی اور اس کے خاوند سمیت دیگر پر شک کااظہار کیا تھا مگر پولیس نے حسب روایت انہیں ٹرخا دیا اور مقدمہ درج نہ کیا جس پر مظہر اقبال کے لواحقین کو عدالت کی مدد سے مقدمہ درج کرانا پڑا۔

روزنامہ جنگ کے مطابق مدعی مقدمہ نور سمند نے الزام لگایا ہے کہ اگر مقامی پولیس ہماری شکایت پر بروقت ایکشن لے لیتی تو شاید مظہر اقبال قتل ہونے سے بچ جاتا اور وہ زندہ برآمد ہوجاتا تاہم پولیس نے مقتول کی مبینہ آشنا رابی بی بی کو حراست میں لے کر تفتیش شروع کی تو اس نےا نکشاف کیا کہ مظہر اقبال کو اس کے خاوند تھما اور دیگر رشتہ داروں نے اس کے میکے گھر چک 14L/37 تھانہ شاہکوٹ ضلع ساہیوال لیجاکر وحشیانہ طریقے سے پہلے گردن اور پھر ٹانگیں، بازو کاٹ کر قتل کرنے کے بعد اس کی نعش پر تیزاب پھینک کر گھر کے صحن میں دفن کردیا جس کے انکشاف پر ہومی سائیڈ انچارج ایس آئی ملک اظہر انے ایس ایچ او تھانہ ماموں کانجن کے ہمراہ وہاں سے مظہر اقبال کی ہڈیوں کا ڈھانچہ برآمد کرکے پوسٹمارٹم کے بعد لواحقین کے حوالے کردی ہے۔

مزید : جرم و انصاف

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...