رضا ربانی نے پارلیمانی قومی سلامتی کمیٹی کی تشکیل کا مطالبہ کردیا

رضا ربانی نے پارلیمانی قومی سلامتی کمیٹی کی تشکیل کا مطالبہ کردیا

اسلام آباد(صباح نیوز) سابق چیرمین سینیٹ سینیٹر میاں رضا ربانی نے پارلیمانی قومی سلامتی کمیٹی کی تشکیل کا مطالبہ کردیا کو ئی اور قومی سلامتی کمیٹی پارلیمینٹ کا نعم البدل نہیں ہوسکتی ریاستی پالیسی کے تحت نفرت اور فرقہ واریت کو فروغ دیا گیا ہے ۔دانشوروں اور ادیبوں کو ریاستی پالیسی کے تحت آگے نہیں بڑھنا دیاگیا۔ملک کی جامعات میں اظہاررائے کی آزادی نہیں ہے ۔ پاکستان کو ریاستی بحران کا سامنا ہے ۔ بدقسمتی سے تمام اداروں کے بلاتفریق اور بلاامتیاز احتساب کا قانون نہ بناسکے ایک بار پھر قانون کا جائزہ لیا جارہا ہے، قانون کی حکمران کے حوالے سے پانچ امتیازی قانون ہے بااثر طبقہ کے لیے الگ قانون ہے۔ اتوار کی شب ایک ٹی وی انٹرویومیں سینیٹر رضا ربانی نے کہااس ریاستی بحران کے حوالے سے عدلیہ سیاستدانوں مذہبی طبقہ سب استعمال ہوئے۔ اب انتہاء پسندی کے طبقہ کے سامنا ہے۔ سیاستدانوں اور سیاسی جماعتوں کو دیوار سے لگانے کی کوشش کی گئی۔ اشرافیہ کی طرف سے کہا گیا ہے بااختیار سویلین حکومت قبول نہیں ہے۔ بد قسمتی سے اس ڈیل میں سیاستدانوں کی اکثریت استعمال ہوئی کیونکہ ان میں بھی شفافیت نہیں تھی۔ ماضی کی پارلیمنٹ بلاتفریق بلا اختیار احتساب کا قانون نہ بنا سکی۔بحیثیت چیئرمین سینٹ میں نے کوشش کی تھی۔ سینیٹر فرحت اﷲبابر بھی آواز بلند کرتے رہے مگر قومی اسمبلی کی بھی مدت پوری ہونے والی تھی اور سیاسی حالات بھی ابتر ہو گئے تھے ۔جب تک احتساب کا یکساں قانون نہ ہوگا حالات بہتر نہ ہونگے ۔یہاں مخصوص طبقہ کا احتساب کیا جا رہا ہے۔ قانون کی حکمران کے حوالے سے پانچ امتیازی قانون ہے بااثر طبقہ کے لیے الگ قانون ہے۔

رضا ربانی

مزید : صفحہ آخر