کوہاٹ‘ ٹی ایم او نے 70 کروڑ روپے کے تعمیراتی منصوبوں کا فیصلہ کر لیا

کوہاٹ‘ ٹی ایم او نے 70 کروڑ روپے کے تعمیراتی منصوبوں کا فیصلہ کر لیا

کوھاٹ (بیورو رپورٹ) اپنے ورکروں کو تنخواہوں کی ادائیگی نہ کر سکنے والے ٹی ایم او نے 70 کروڑ روپے کے تعمیراتی منصوبوں کا فیصلہ کر لیا خراب گاڑیوں کی مرمت نہ کروانے والے ادارے نے شبستان پلازہ‘ عجب خان پلازہ اور شادی ہال کی تعمیر کے لیے کمر کس لی تفصیلات کے مطابق دیوالیہ ٹی ایم اے کوھاٹ کے افسران نے ادارے کا بیڑہ غرق کرنے اور خود ملائی کھانے کے شوق میں 70 کروڑ کے ٹینڈر جاری کر دیئے ان ٹینڈرز میں 277.45 ملین کی لاگت سے شبستان پلازہ 235.81 ملین کی رقم سے پرانی جیل میں عجب خان آفریدی پلازہ جبکہ 179.614 ملین کی لاگت سے شادی ہال‘ فلیٹس وغیرہ کوتل پلازہ میں تعمیر کیے جائیں گے یہ تمام منصوبے ٹی ایم اے کوھاٹ اپنی مدد آپ کے تحت اپنے ذرائع آمدن سے تعمیر کرے گا دلچسپ امر یہ ہے کہ ٹی ایم اے کوھاٹ کے نااہل افسران گزشتہ سات سالوں میں اباسین پلازہ کی تعمیر مکمل نہ کر سکے جبکہ تحصیل پلازہ میں گزشتہ ایک سال سے ٹرانس فارمر لگوانے میں ناکام ہیں جبکہ کئی ریٹائر ہونے والے ملازمین کئی مہینوں سے پنشن کی ادائیگی کے لیے روزانہ ٹی ایم اے آ کر دھکے کھا رہے ہیں جنہیں ادائیگی کے لیے رقم نہیں اسی طرح ٹی ایم او کوھاٹ نے شبستان ہوٹل کی مسماری کے لیے ٹینڈر تو جاری کیا ہوا ہے مگر ذرائع کے مطابق کئی لوگ عدالتوں سے حکم امتناعی لے چکے ہیں اس حوالے سے ٹی ایم اے ملازمین کا کہنا تھا کہ ٹی ایم او کوھاٹ اور تحصیل ناظم پہلے ہماری تنخواہوں اور پنشن کی ادائیگی کا بندوبست کریں بعد میں اگر ان کے پاس اتنی خطیر رقم موجود ہے تو ٹینڈر کریں مگر جو ٹی ایم او چھ مہینوں میں خراب کھڑی گاڑیوں کی مرمت فنڈز نہ ہونے کی وجہ سے نہیں کروا سکتا وہ 70 کروڑ کے ٹھیکے کیسے اور کہاں سے دے رہا ہے اس سلسلے میں جب ٹی ایم او کوھاٹ سے بات کرنے کی کوشش کی گئی تو موصوف مسلسل دو دن کوھاٹ سے غیر حاضر پائے گئے عوامی حلقوں نے منتخب ممبران اسمبلی اور ضلع ناظم سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ٹی ایمی اے کوھاٹ کے افسران کو مبینہ طور پر ٹھیکوں میں ملائی کھانے سے روکنے کے لیے فوری طور پر مذکورہ ٹینڈرز کو کینسل کر کے ادارے کے ملازمین کی تنخواہوں‘ پنشن اور نامکمل منصوبوں کو مکمل کرنے پر توجہ دینے کی ہدایات دی جائیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر