”2016میں نواز شریف نیو یارک کے ریسٹورنٹ میں کھانا کھانے گئے تو اسرائیلی وزیراعظم نے ۔۔۔“غیر ملکی خبر رساں ادارے نے ایسا تہلکہ خیز انکشاف کردیا کہ پاکستانیوں کے بھی ہوش اڑ جائیں گے

”2016میں نواز شریف نیو یارک کے ریسٹورنٹ میں کھانا کھانے گئے تو اسرائیلی ...
”2016میں نواز شریف نیو یارک کے ریسٹورنٹ میں کھانا کھانے گئے تو اسرائیلی وزیراعظم نے ۔۔۔“غیر ملکی خبر رساں ادارے نے ایسا تہلکہ خیز انکشاف کردیا کہ پاکستانیوں کے بھی ہوش اڑ جائیں گے

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )پاکستان میں اسرائیلی طیارے کی آمد کی خبر کے بعد سوشل میڈ یا پر خوب ہنگامہ مچا اور ساتھ ہی یہ بحث بھی شروع ہو گئی کہ پاکستان اور اسرائیل کے درمیا ن تعلق ہونا چاہیے یا نہیں ،اینکر پرسن معید پیر زادہ نے بھی سوشل میڈ یا پر اسرائیل کے ساتھ پاکستان کے سفارتی تعلق کی حمایت کی تھی اور کہا تھا کہ اگر سعودی عرب اسرائیل کے ساتھ خفیہ تعلقات رکھ سکتا ہے اور ترکی اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات رکھ کر ان کی پالیسیوں پر تنقید کرتا ہے تو پاکستان اسرائیل کے ساتھ تعلق کیوں نہیں رکھ سکتا تاہم اس حوالے سے تمام بحث و مباحثے اس وقت دم توڑ گئے جب حکومت نے کسی اسرائیلی جہاز کے پاکستان آنے کی تردید کی اور صدر مملکت عارف علوی نے کہا کہ اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلق قائم نہیں ہو نگے ۔

ٹائمز آف اسرائیل میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں بتا یا گیا ہے کہ دونوں ممالک کے سربراہان اور عوام ایک دوسرے سے فاصلہ رکھتے ہیں۔رپورٹ کے مطابق 2016میں نواز شریف نیویارک کے ایک ریسٹورنٹ میں کھانا کھانے آئے تو اس ریسٹورنٹ میں اسرائیلی وزیراعظم نے بھی آنا تھا لیکن نتن یاہو پاکستانی وزیراعظم کی موجودگی کی وجہ سے اس ریسٹورنٹ میں نہیں گئے ۔رپورٹ میں کہا گیا کہ دونوں ملکوں کے درمیا ن خفیہ تعلقات ہیں اور وکی لیکس ڈاکیو منٹ سے بھی پتہ چلتا ہے کہ دونوں ملکوں کے افسران خفیہ طور پر آپس میں ملتے ہیں ۔

مزید : قومی