بھارتی سپریم کورٹ کے فیصلے سے مسلمانوں کی دل آزاری ہوئی ہے،شیر اعظم وزیر

بھارتی سپریم کورٹ کے فیصلے سے مسلمانوں کی دل آزاری ہوئی ہے،شیر اعظم وزیر

  



بنوں (بیورورپورٹ)بابری مسجد کیس میں بھارتی سپریم کورٹ نے معتصبانہ فیصلہ دیکر مسلمانوں کی دل آزادی کی ہے اور یہ فیصلہ انصاف کا قتل ہے ان خیالات کا اظہار پیپلز پارٹی خیبر پختونخوا کے پارلیمانی لیڈر وسابق صوبائی وزیر شیراعظم خان نے اخباری نمائندوں سے خصوصی بات چیت کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ ہندی سپریم کورٹ کا یہ فیصلہ جانبداری کی مثال ہے اور یہ تاریخ کا سیاہ ترین دن ہے جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے کیونکہ یہ فیصلہ مسلمانوں کے جذبات سے کھیلنے کے مترادف ہے اور ہندوؤں کی تنگ نظری کی عکاسی کرتا ہے یہ مسلم دشمن فیصلہ دیکر بھارتی عدلیہ نے ثابت کردیا کہ یہ فیصلہ بی جے پی کا تیار ردہ فیصلہ ہے جسے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے صرف پڑھ کر سنایا ہے انہوں نے کہا کہ اس فیصلے سے تاثر دیا گیا کہ بھارتی عدلیہ آزاد نہیں یا پھر وہ اقلیتوں کے حق میں انصاف پر مبنی فیصلوں سے ڈرتی ہے انہوں نے کہا کہ خود کو جمہوری ملک کہنے والا بھارت اس فیصلے سے خود کو سیکولر ثابت کرنے میں ناکام ہوگیا ہے آج مسلمانوں کے ساتھ یہ رویہ ہے تو کل کو سکھوں کے ساتھ بھی اسی طرح کا سلوک کیا جاسکتا ہے انہوں نے کہا کہ بھارت مسلمانوں کے خلاف نفرت آمیز رویہ ترک کردیں اور مسلمانوں کے جذبات سے کھیلنا بند کردیں یا پھر خد کو جمہوری ملک کہنا بند کردیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر