حکومت نے وہیکلز اوور لوڈنگ کا قانون ختم کرک کے ماحول دشمنی کا ثبوت دیا ، ٹرانسپورٹرز 

حکومت نے وہیکلز اوور لوڈنگ کا قانون ختم کرک کے ماحول دشمنی کا ثبوت دیا ، ...

  



لاہور(جاوید اقبال)آل پاکستان گڈز ٹراسپورٹرز آنرز ایسوسی ایشن کے عہدیداروں نے کہا ہے کہ حکومت نے گڈز ٹرانسپورٹ کی اور لوڈنگ پر پابندی عائد کر کے ثابت کیا ہے کہ ملک کے اند قانون و آئین کی کوئی پابندی نہیں ہے ،یہ ماحول دشمنی اورجنگل کا قانون ہے ،حکمرانوں نے ایسا کر کے پارلیمنٹ کے بنائے گئے قانون "ایکسل لوڈ لیمٹ " کے قانون کامذاق اڑایا ہے۔قانون پر عمل درآمد نہ ہونے سے سڑکیں دنو ں میں کھنڈرات میں تبدیل ہو جاتی ہیں،حادثات کی وجہ سے درجنوں شہری مارے جاتے ہیں اس امر کا اظہار انھوں نے گزشتہ روز پاکستان فورم میں کیا۔ اس حوالے سے آل پاکستان گڈز ٹراسپورٹ آنرز ایسوسی ایشن کے صدر حاجی محمد عارف جنرل سیکرٹری محمد اویس چوہدری ایڈوکیٹ ایگزیکٹیو ممبران معین احمد وڑائچ اور عبدالرحمن وٹونے فورم میں حصہ لیا انھوں نے مشترکہ موقف اختیار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے گڈز ٹرانسپورٹ کے لوڈ کے حوالے سے ایک ملک کے اند ر دو قانون لاگو کر رکھے ہیں اور لوڈ کے حوالے سے موٹر وے پر اور قانون ہے اور جی ٹی روڈ پر الگ قانون ہے۔ موٹروے پر سفر کرنے والے گڈز ٹرانسپورٹ کا ایکسل لوڈ لیمٹ کا قانون لاگو ہے مگر جی ٹی روڈ پر سفر کرنے والی گڈز ٹرانسپورٹ مادر پدر آزاد ہے یہاں 60سے 80ٹن ویٹ ٹرک پر لاد کر سفر کرنے کی آزادی ہے مگر موٹروے پر اس کی اور لوڈنگ پر گاڑی بند ہوتی ہے اور بھاری جرمانہ عائد ہوتا ہے ۔بیس سال قبل ایکسل لوڈ لیمٹ کا قانون پاس ہو ا جس پر انیس سال بعد یکم جون 2019سے عمل درآمد شروع ہوا مگر چند روز بعد اس قانون کے عمل درآمد پر وزیراعظم نے اس قانون پر پابندی عائد کر دی۔ ایسا سیمنٹ ،شوگر،کھاد،بجری اور سریا کے بڑے صنعت کاروں کو فائدہ پہنانے کے لئے کیا جا رہا ہے جو کرایہ بچانے کے لئے ایسا کروایا جا رہاہے۔ ایک ایک ٹرک میں 75سے 80ٹن وزن لوڈ کیا جاتا ہے قانون کے مطابق یہ وزن تین ٹرکوں کا ہے خوشاب کا پل اور لوڈنگ کی وجہ سے خستہ حالی کا شکار ہو گیا ہے۔وزیر اعظم اگر اس قانون پر عملدرآمد کروا دیں تو ایک طرف سڑکوں پر ٹرکوں کی بریکیں فیل ہونے والے حادثات میں بڑی حد تک کمی واقع ہو گی۔

ٹرانسپورٹرز

مزید : صفحہ آخر