ملکی تاریخ کا سیاہ ترین دن ، اپنی نوکری کی خاطر منتخب حکومت کا تختہ الٹے 14سال بیت گئے ، نواز شریف پھر وزیراعظم اور پرویز مشرف قیدی بن گئے

ملکی تاریخ کا سیاہ ترین دن ، اپنی نوکری کی خاطر منتخب حکومت کا تختہ الٹے 14سال ...
ملکی تاریخ کا سیاہ ترین دن ، اپنی نوکری کی خاطر منتخب حکومت کا تختہ الٹے 14سال بیت گئے ، نواز شریف پھر وزیراعظم اور پرویز مشرف قیدی بن گئے

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) آج ہی کے دن 12اکتوبرکو مسلم لیگ ن کی منتخب جمہوری حکومت کاتختہ الٹنے کو 14سال بیت گئے ہیں جب اُس وقت کے فوجی سربراہ جنرل پرویز مشرف نے اپنی نوکری بچانے کیلئے حکومت کا تختہ الٹ کر اقتدارپر قبضہ کرلیا اور قید کے بعد وزیراعظم نواز شریف کو جلا وطن کر دیا گیا جبکہ پرویز مشرف اگلے نوسال ملک کے سیاہ و سفید کے مالک بن گئے۔تاریخ نے اپنے آپ کو دہرایا اور آج پرویز مشرف اپنے ہی فارم ہاﺅس میں قید اور نوازشریف وزیراعظم ہیں ۔بتایاجاتاہے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان کارگل کے محاذ پر جنگ کے بعد اس وقت کے وزیراعظم نوازشریف اور آرمی چیف و چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی جنرل پرویز مشرف کے درمیان شدید اختلافات پیدا ہو گئے جس کے بعد 12 اکتوبر 1999ءکو وزیراعظم نواز شریف نے پرویزمشرف کو اس وقت برطرف کر دیا جب وہ سری لنکا کے دورے سے واپسی پر وطن آ رہے تھے۔ جنرل مشرف کی جگہ ڈی جی آئی ایس آئی لیفٹننٹ جنرل ضیاءالدین کو فوج کا نیا سربراہ مقرر کیا گیا۔ جنرل مشرف کے طیارے کو کراچی میں لینڈنگ سے روک کر اس کا رخ نواب شاہ کی طرف کرنے کا حکم جاری کیا گیا تاہم کور کمانڈر کراچی کے حکم پر ایئرپورٹ کا کنٹرول فوج نے سنبھال لیا اور پرویز مشرف کا طیارہ بالاخر لینڈ کر گیا۔ فوج نے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے سرکاری ٹیلی ویژن، ریڈیو اور تمام ہوائی اڈوں کا کنٹرول سنبھال لیا۔ وزیراعظم ہاو¿س پر بھی فوجی دستے تعینات کر دیئے گئے۔ 14 اکتوبر کو پرویز مشرف نے آئین معطل کر کے ملک میں ایمرجنسی کا اعلان کر دیا اور ایک عبوری آئینی حکم نامہ جاری کیا گیا۔ پرویز مشرف نے ملک کے چیف ایگزیکٹیو کے عہدے کا چارج سنبھال لیا۔ قومی اسمبلی، سینیٹ اور چاروں صوبائی اسمبلیاں تحلیل کر دی گئیں تاہم اس وقت کے صدر رفیق تارڑ اپنے عہدے پر برقرار رہے۔ جنوری 2001میں نواز شریف کو ایک معاہدے کے تحت جلا وطن کر دیا گیا۔ پرویز مشرف نے 2002 میں عام انتخابات کرائے تاہم سول انتظام بحال ہونے کے باوجود جنرل پرویز مشرف 2008 ءتک ملک میں سیاہ و سفید کے مالک رہے۔ 12اکتوبرکو ملکی تاریخ کا سیاہ دن قراردیاجاتاہے لیکن اُس وقت تک دوبڑی جماعتیں مسلم لیگ ن اور پیپلزپارٹی اپنے ہی دورحکومت کے خاتمے کو سیاہ دن قراردیتی ہیں ۔

مزید : قومی /اہم خبریں