بلدیاتی انتخابات سے پہلے الیکشن ریفارمز ضروری ہیں ،سیاسی رہنماء

بلدیاتی انتخابات سے پہلے الیکشن ریفارمز ضروری ہیں ،سیاسی رہنماء


لاہور(نمائندہ خصوصی) وزیراعظم نواز شریف کی جانب سے آئندہ سال مارچ میں وزراء اعلی کو بلدیاتی الیکشن کروانے کی ہدایت پر تحریک انصاف نے ’’پاکستان ‘‘ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ ایک آئینی تقاضہ ہے کہ بلدیاتی الیکشن ہونا چاہئے لیکن اس سے پہلے الیکشن کمیشن میں ریفارمز ضروری ہیں کیونکہ موجودہ الیکشن کمیشن اپنی ساکھ کھو چکا ہے جبکہ پیپلز پارٹی نے کہا ہے کہ الیکشن ریفارمز ہونی چاہئے لیکن اگر اس طرح سے بلدیاتی الیکشن میں ذرا سا بھی مزید تاخیر کا امکان ہو تو پھر موجودہ الیکشن کمیشن کے تحت ہی بلدیاتی الیکشن کروادینے چاہئے اس میں مزید تاخیر نہیں ہونی چاہئے پیپلز پارٹی کی بلدیاتی الیکشن کی تیاریاں مکمل ہیں ۔ پاکستان تحریک انصاف کی کور کمیٹی کے رکن اور پنجاب اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر میاں محمود الرشید نے کہا کہ یہ اچھی بات ہے کہ وزیراعظم نے بلدیاتی الیکشن کروانے کی صوبوں کو ہدایت کی ہے لیکن اس وقت سب سے زیادہ ضرورت الیکشن ریفارمز کی ہیں کیونکہ اگر بلدیاتی الیکشن موجودہ الیکشن کمیشن کے تحت ہوں گے تو پھر سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا وہ انتخابات عوام کو قابل قبول ہوں گے اس لئے ان انتخابات سے پہلے الیکشن ریفارمز ہنگامی بنیادوں پر ہونی چاہئے تب ہی انتخابات کا کوئی فائدہ ہو گا۔پیپلز پارٹی کے ترجمان راجہ عامر خاں نے کہا کہ ہم بھی چاہتے ہیں کہ الیکشن کمیشن میں ریفارمز ہوں لیکن اس وقت ہم نے اس بات کو بھی سامنے رکھنا ہے کہ اگر پی ٹی آئی کے مطالبے پر بلدیاتی الیکشن کے انعقاد سے پہلے الیکشن کمیشن میں ریفارمز کر بھی لی جائیں تو کیا وہ اس کے بعد نئی حلقہ بندیوں کا ایشو بنا کر بلدیاتی الیکشن کو مزید تاخیر میں ڈلوانے کا باعث تو نہیں بنے گی کیونکہ ہم یہ چاہتے ہیں کہ مزید کسی قسم کا بھی وقت ضیائع کئے بغیر بلدیاتی الیکشن کروادئیے جائیں ۔مسلم لیگ (ق) کے مرکزی ایڈیشنل جنرل سیکرٹری میاں طاہر صدیق نے کہا کہ ہماری جماعت کا بھی یہی مطالبہ ہے کہ بلدیاتی الیکشن سے پہلے الیکشن کمیشن میں ریفارمز کی جائیں تاکہ عام انتخابات کی طرح کسی کو بلدیاتی الیکشن پر انگلی اٹھانے کا موقع نہ ملے۔

مزید : صفحہ آخر