اعتراف عظمت

اعتراف عظمت
اعتراف عظمت

  


پچھلے دنوں عالمی بنک نے جنوبی ایشیا بارے جاری کردہ اپنی رپورٹ میں بتایا ہے کہ پاکستان میں میاں محمد نواز شریف کو نااہل قرار دینے سے ملک کے اندر سیاسی خطرات میں اضافہ ہوا ہے، بے یقینی کی صورت حال پیدا ہونے لگی ہے۔

صنعتی شعبہ میں توقعات سے کم ترقی ہوئی،معاشی ترقی کی شرح میں کمی کا اندیشہ ہے اور کرنٹ اکاونٹ خسارہ بڑھ گیا ہے۔صرف عالمی بنک اپنی رپورٹ میں میاں محمد نواز شریف کو نااہلی قرار دینے کے بعد خطرات اور اندیشوں کا ذکر نہیں کر رہا، ا ندرون ملک کاروباری طبقہ عملی طور پر ایسے حالات و واقعات سے گزر رہا ہے۔ کاروباری طبقے نے میاں محمد نواز شریف کے اقتدار میں آنے سے پہلا پاکستان نہ صرف اچھی طرح دیکھ رکھا ہے، بلکہ ان حالات کو بھگت چکا ہے، اس وقت بیرونی سرمایہ کاری کا فقدان تھا۔

گھنٹوں بجلی بند رہتی، جس کی وجہ سے صنعتکار اپنی صنعت بیرون ملک منتقل کرنے پر مجبور ہوگیا تھا، خوش قسمتی سے میاں محمد نواز شریف ایسے معیشت دان اور عوام دوست رہنما ثابت ہوئے ہیں کہ جب بھی اقتدار میں آئے، انہوں نے نہ صرف جامد صنعتی شعبے کو چلانے کا بندوبست کیا .

مارکیٹوں کی رونق بحال کی، بلکہ بڑے ترقیاتی منصوبے شروع کئے۔ رو ز گار کے مواقع پیدا کرنے کے لئے نت نئی تدابیر عمل میں لائے، حقیقت یہ ہے کہ اگر میاں محمد نواز شریف کی، اقتصادی ترقی و خوشحالی کے بڑے منصوبوں اور کارکردگی کا صحیح ادراک کر لیا جاتا تو جلد بازی میں انہیں نااہل قرار دینے کی بجائے ایسا راستہ اختیار کرنے کو ترجیح دی جاتی کہ ترقی کا سفرجاری رہتا ، حالیہ فیصلوں کے معیشت پر نقصان دہ اثرات محسوس کرنے اور دیکھنے کے باوجود کاروباری طبقہ اپنی روایات کے مطابق خاموش رہا، اکثر و بیشتر حکومتوں اور سیاست دانوں کے غلط فیصلوں اور کاروبار کے خلاف اقدامات پر خاموش رہتا ہے۔

ایک وقت ایسا تھا کہ حکمرانوں نے کاروباری طبقہ کی ملیں فیکٹریاں اور کارخانے اس انداز میں چھین لئے کہ اگر کسی مالک کی ذاتی گائے بھینس بھی اس میں موجود تھی تو بر سراقتدار جماعت کے ورکر اسے بھی مال غنیمت سمجھ کر پولیس کے حصار میں لے گئے . اس کے بعد پاکستان کی معیشت بار بار تنزلی کے گڑھے میں گرتی رہی، کاروباری طبقہ تن بدن کا خون پسینہ ایک کرکے اسے دوبارہ پاؤں پر کھڑا کرتا چلا آ رہا ہے۔ 2013

ء کے الیکشن سے قبل پاکستانی معیشت بری طرح زبوں حالی کا شکار ہو چکی تھی ، ملک میں دہشت گردوں کا راج تھا .بیرونی سرمایہ کاری کا فقدان اور گھنٹوں بجلی بند رہتی تھی، سستی اوروافر بجلی پیدا کرنے کے سود مند ترین منصوبہ کالا باغ ڈیم کو حکمرانوں نے اپنی ذاتی مصلحتوں کے تحت سرد خانے میں ڈال دیا ہوا تھا، الیکشن آیا تو کاروباری طبقہ اور عوام نے میاں محمد نواز شریف کو اپنے دکھوں کا مداوا کار جانا اور ووٹوں کی کثرت سے انہیں کامیابی سے ہمکنار کیا، آج ملکی ترقی کے سب سے بڑے ناقد سیاست دان میاں محمد نواز شریف کو مبارکبا دینے پہنچے اور مل کر کام کرنے کے عزم کا اظہار کیا، مارچ 2014 ء میں اسی سیاست دان نے میاں محمد نواز شریف کو بنی گالا میں چائے کی دعوت دی، گھنٹوں خوش گپیاں ہوتی رہیں . اسی سیاست دان کو نہ جانے کہاں سے اشارہ ملا کہ وہ 2014 ء سے وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف کو وزیر اعظم ہاوس سے نکالنے کے لئے دھرنوں اور جلسے جلوسوں کے ذریعے زور آزمائی کرنے لگے، تین سال تک سیاست دانوں نے ملک کو سیاسی عدم استحکام کا شکار کئے رکھا اس کے باوجود سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف کی قیادت میں بڑے ترقیاتی منصوبوں پر کام جاری رہا، ان میں سی پیک سر فہرست ہے، اس عظیم الشان میگا پراجیکٹ بارے سیاست دان نے اندرون ملک غلط فہمیاں 249پیدا کرنے پر اکتفا نہیں کیا، بلکہ چینی قیادت کو اس منصوبے سے دستکش ہونے کی ترغیب دینے سے بھی گریز نہیں کیا ۔

پاکستانی قیادت اور چینی رہنماؤں کے مابین بہترین تعلقات کے سامنے سارے شیطانی منصوبے ریت کی دیواریں ثابت ہوتے رہے اور ترقی کا عمل جاری رہا۔ لاہور اسلام آباد راولپنڈی ملتان میں میٹرو بس چلی، فیصل آباد میں چلنے والی ہے، لاہور میں اورنج لائن ٹرین کا جدید ترین منصوبہ تکمیل کے آخری مراحل میں ہے۔ انجن اور چند بوگیوں کی نقاب کشائی کی تقریب میں وزیر اعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف نے بتایا کہ ٹریک کی تیاری میں ایک سیاسی جماعت نے گیارہ مقامات پر رکاوٹیں کھڑی کی ہیں، کیس عدالت میں ہے، انہوں نے توقع کی ہے کہ عوامی مفاد کے شاندار منصوبہ کی تعمیر میں حائل کردہ رکاوٹوں کو عدلیہ جلد اپنے فیصلے سے دور کردے گی، حادثات کی صورت میں 112 کی گاڑیا ں اور سٹاف پوری تندہی سے کام کررہا ہے، تاہم شہر کی تنگ گلیوں میں گاڑیوں کی رسائی مشکل ہوجاتی ہے، اس رکاوٹ کو ختم کرنے کے لئے وزیر اعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف نے پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ فری موٹر بائیک ایمبولینس سروس شروع کردی ہے۔

یہ سود مند ترین منصوبہ ہے جس پر عوام بہت خوش اور میاں محمد شہباز شریف کو مبارکباد پیش کرتے ہیں،قدم قدم پر ترقیاتی منصوبوں میں روڑے اٹکانے کے خوگر سیاست دان اگر عوامی فلاح و بہبود کے کاموں کی تکمیل کے بارے میں بھی سوچ لیا کریں تو عوامی فلاح کی کارکردگی میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

میاں محمد شہباز شریف کی قیادت میں پنجاب حکومت نے غریب و بے سہارا لوگوں کے لئے کفن دفن کا مفت انتظام کر دیا ہے، شہر خموشان کے انتظام پر غریب و بے سہارا لوگ موجودہ حکومت اور میاں محمد شہباز شریف کے لئے دعا گو ہیں کہ اللہ تعالی نیکی و بھلائی کے کاموں اور منصوبوں کے لئے انہیں مزید اور مسلسل ہمت اور صلاحیت دے، یہ وہ کام ہیں، جن کی منصوبہ بندی سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف نے کی، لیکن نااہل قرار پانے کی وجہ سے وہ نہ کرپائے۔

ایسے محسوس ہوتا ہے کہ منصوبہ کے باقی حصہ کو جلد از جلد مکمل کرنے کی کوشش ہو رہی ہے، لیکن ایک سوال زبان زد عام ہے کہ صرف ایک خاندان کے خلاف جلد بازی میں کارروائی جس طرح عمل میں لائی جارہی ہے، کہیں انصاف پر عملداری کا تصور بے معنی ہو کر نہ رہ جائے .توقع ہے کہ نیب کے نئے چیئرمین ادارے کو کسی طور بدنام نہیں ہونے دیں گے اور نہ ہی انتقامی کارروائی کا تاثر ابھرنے دیں گے ۔

مزید : کالم


loading...