خیبر ایجنسی ،تحصیل کے دفاتر سے پولیٹیکل محرر کی عدم تعیناتی

خیبر ایجنسی ،تحصیل کے دفاتر سے پولیٹیکل محرر کی عدم تعیناتی

خیبر ایجنسی (بیوروپورٹ)خیبر ایجنسی جمرود اور لنڈیکوتل میں پاک افغان شاہراہ پر واقع پانچ چیک پوسٹوں پر دو درجن پولیٹیکل محررز تعینات ہیں، ایک ،ایک چیک پوسٹ پر پانچ اور سات پولیٹیکل محررز تعینات ہیں جو ہفتے میں ایک دن کیلئے ڈیوٹی سر انجام دیتے ہیں جبکہ تحصیلوں کے دفتروں کے اندر ایک ،ایک پولیٹیکل محرر کی تعیناتی سے کیسوں کے نمٹانے میں عوام شدید مشکلات سے دوچار ہیں پولیٹکل انتظامیہ ذرائع کے مطابق تختہ بیگ چیک پوسٹ سے لے کر مچنی چیک پوسٹ تک دودرجن پولیٹکل محررز تعینات ہیں تختہ بیگ چیک پوسٹ اور بھگیاڑی چیک پوسٹوں پر سات ،سات پولیٹیکل محررز تعینات ہیں جو ہفتے میں ہر ایک محرر کی ڈیوٹی کا اپنا دن مقرر ہو تا ہے جبکہ ان میں بعض کی ایڈیشنل پوسٹ بھی ہوتی ہیں اورا نکی جگہ انکے منشی ڈیوٹی سر انجام دیتے ہیں ذرائع کے مطابق جمرود اڈہ پر دو پولیٹیکل محررزاور پڑانگ سم چیک پوسٹ پر چھ اور مچنی چیک پوسٹ پر چار محررز تعینات ہیں جب ان کے تبادلے کئے جا تے ہیں تو پھر ان کی سفارش اعلیٰ حکام اور فاٹاسیکرٹیریٹ کے اعلیٰ افسران کر تے ہیں اور پولیٹکل ایجنٹ انکے سامنے بے بس ہو جا تے ہیں چیک پوسٹوں پر زیا دہ محرروں کی تعیناتی سے تحصیل دفتروں میں مسائل پیدا ہو گئے ہیں کیونکہ دفتروں کے اندر صرف ایک پولیٹیکل محرر تعینات ہوتا ہے جسکی وجہ سے عام لوگوں کی کیسوں کو نمٹانے میں شد یدمشکلات درپیش ہوتے ہیں اور تحصیل دفتر وں کے مسائل میں اضافہ ہو تا جا رہا ہے جمرود اور لنڈیکوتل کے عوام نے کئی بار احتجاج بھی کیا کہ ان کی زمین، لین دین اور دوسرے تنازعات حل نہیں ہو تے کیونکہ تحصیل دفتروں میں کیس بہت زیا دہ ہو تے ہیں اور محررز صرف ایک یا دو ہو تے ہیں اس لئے ان پر بوجھ زیادہ ہونے سے کیسسز نمٹانے میں کئی مہینے لگ جاتے ہیں عام لوگوں کے مطابق مذکورہ چیک پوسٹوں پر تعینات پولیٹیکل محرروں کے اثاثے بڑھتے جار ہے ہیں اور انتہائی پر سکون اور راحت کی شاہانہ زندگی گزارتے ہیں یہ بھی دیکھنے میں آیا ہے کہ زیادہ تر پولیٹیکل محرر استعداد کے لحاظ سے بھی بہت کمزور ہیں اور ان میں سے اکثر ڈرافٹنگ تک نہیں کر سکتے اس لئے تحصیل دفاتر میں کام کرنے سے بھاگتے ہیں لنڈیکوتل اور جمرود کے عوام نے اعلیٰ حکام اور پولیٹیکل ایجنٹ سے مطالبہ کیا ہے کہ چیک پوسٹوں پر محررز کی تعداد کم کرکے ان کو تحصیل دفتروں میں تعینات کیا جائے تاکہ عام لوگوں کے مسائل حل ہونے میں مدد دے سکے واضح رہے کہ مذکورہ پانچ چیک پوسٹیں پاک افغان شاہراہ پر واقع ہیں اور انکی روزانہ آمدن لاکھوں روپے ہیں اس لئے پولیٹیکل محررز بڑے بڑے سفارشوں سے تعیناتی کروا تے ہیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...