قبضہ گروپ نے بیوہ کی زمین ہتھیا لی، در بدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور

قبضہ گروپ نے بیوہ کی زمین ہتھیا لی، در بدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور

  



لاہور(خبر نگار) انصاف کے لئے آواز اٹھانے پر اغوا اور قتل کی دھمکیاں دی جا رہی ہیں متاثرہ خاتون نے سپریم کورٹ کے باہر خود سوزی کی دھمکی دیدی۔ لاہورپریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے موضع سلطانکے نزد جاتی عمرہ رائے ونڈ کی رہائشی ممتاز بی بی نے بتایا کہ میری 85کنال قیمتی اراضی پر اس کے قریبی رشتے داروں نے شوہر کو قتل کر کے قبضہ کر لیا۔ ملزموں مشتاق حسین، فقیر اللہ، شہزاد ، مشتاق کے بیٹوں حیدر، عمران محسن اور فقیر اللہ کے بیٹوں منیر وغیرہ نے اراضی ٹھیکے پر لی پھر ممتاز بی بی کے شوہر ہدایت اللہ اور ان کے والد صفدر اور والدہ شریفاں بی بی کو قتل کر کے زمین جعل سازی سے اپنے نام کروا لی۔ ممتاز بی بی نے اپنے دیور سے نکاح کر لیا، ملزموں نے اسے بھی قتل کر دیا اور بیوہ سے اغواء کے بعد سادہ کاغذ پر زمین کے کاغذات پر انگوٹھے لگوا لئے۔ ممتاز بی بی نے کہا اس وقت میری اور میرے بچوں کی زندگی کو شدید خطرہ ہے، ملزم مجھے مسلسل قتل کرنے کی دھمکیاں دے رہے ہیں۔ ۔ بیوہ ممتاز بی بی کے بچوں راشد محمود ار عابد محمود نے پریس کانفرنس کے دوران الزام لگایا کہ مقامی سابقہ ایم پی اے اور یونین کونسل سلطانکے کے چیئرمین جس کا تعلق مسلم لیگ ن سے ہے وہ ملزموں کی پشت پناہی کر رہے ہیں۔ وزیر اعظم عمران خان اور چیف جسٹس سپریم کورٹ سے درخواست ہے کہ وہ ہماری 85کنال زرعی زمین واگذار کروائیں ورنہ میں اپنے بچوں کے ہمراہ پریم کورٹ کے باہر خود کو زندہ جلا دوں گی ۔

مزید : علاقائی


loading...