العزیزیہ ریفرنس ، نیب کی نواز شریف کا 342میں بیان ریکارڈ کرنے کی استدعا مسترد

العزیزیہ ریفرنس ، نیب کی نواز شریف کا 342میں بیان ریکارڈ کرنے کی استدعا مسترد

  



اسلام آباد(سٹاف رپورٹر )اسلام آباد کی احتساب عدالت نے نیب کی نوازشریف کا 342 کا بیان ریکارڈ کرنے کی استدعا مسترد کرتے ہوئے سابق وزیراعظم کیخلاف العزیزیہ سٹیل مل ریفرنس میں شواہد مکمل کرنے کیلئے نیب کوآج تک کا وقت دے دیا، عدالت نے فلیگ شپ ریفرنس میں واجد ضیاء کو بھی (آ ج) طلب کر لیا ۔ اسلام آباد کی احتساب عدالت میں گزشتہ روز العزیزیہ سٹیل مل ریفرنس کی سماعت ہو ئی ، سابق وزیراعظم نوازشریف کی جمعرات کو حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منظور ہو گئی،خواجہ حارث اور نیب پراسیکیوٹر کے درمیان گرما گرمی ہو تی رہی،نیب پراسیکیوٹرنے کہا کہ پہلے ملزم کا 342 کا بیان ریکارڈ کیا جائے،خواجہ حارث بولے پہلے دن سے کہہ رہے ہیں کہ دونوں ریفرنسز کا ایک ساتھ فیصلہ چاہتے ہیں، پہلے طے ہوا تھا کہ واجد ضیاء کا بیان دوسرے ریفرنس میں بھی پہلے مکمل کیا جائے گا۔ نیب پراسیکیوٹرنے کہا کہ عدالت چاہے تو دونوں ریفرنس میں نواز شریف کا بیان ریکارڈ کرنے کی تاریخ مقررکردے،خواجہ حارث نے کہا کہ فلیگ شپ اور العزیزیہ ریفرنس میں مشترکہ شواہد ہیں، اگر العزیزیہ سٹیل مل ریفرنس کا فیصلہ الگ کرنا ہے تو پھر الگ بات ہے،دونوں ریفرنسز میں اگر فیصلہ اکھٹا آنا ہے تو پھر واجد ضیاء کا بیان ریکارڈ کرنے میں کیا حرج ہے۔نیب پراسکیوٹرنے کہا کہ اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا کہ تینوں ریفرنسز مشترکہ نہیں ہیں۔نیب پراسیکیوٹرنے کہا کہ ملزم کا پہلے بیان ریکارڈ کرنے کا ایک ساتھ فیصلہ کرنے سے تعلق نہیں۔ خواجہ حارث نے کہا کہ کھل کر کہیں فیصلہ اکھٹے نہیں ہو سکتا،ملزم کے ساتھ چوہے بلی کا کھیل نہ کھیلا جائے، آپ گول مول بات نہ کریں ،استغاثہ چاہتی ہے ایک فیصلہ کر کے سو جائے۔

العزیزیہ ریفرنس

مزید : صفحہ اول