حکومتی مہنگائی کا ایک اور بم گرانے کیلئے تیار ، پٹرولیم کی قیمتیں مرحلہ وار 20روپے بڑھانے کا فیصلہ

حکومتی مہنگائی کا ایک اور بم گرانے کیلئے تیار ، پٹرولیم کی قیمتیں مرحلہ وار ...

  



ملتان ( سٹاف رپورٹر ) عوام پرمہنگائی کا ایک اور بم گرانے کی تیاریاں کرلی گئیں ۔وفاقی حکومت نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں مرحلہ وار20روپے فی لیٹر تک بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے۔ذرائع کے مطابق وفاقی حکومت کو تجویز دی گئی ہے کہ یکم نومبر2018کوپٹرول کی قیمتوں میں فی لیٹر 6سے 8روپے اضافہ کر دیاجائے ۔ اوگرا کے مطابق انٹر نیشنل مارکیٹ میں پٹرول کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے۔اس لئے پاکستان میں بھی قیمتیں فی لیٹر 20روپے تک بڑھانا (بقیہ نمبر13صفحہ12پر )

ناگزیر ہے۔ فی لیٹر 20روپے تک قیمتوں میں اضافہ مرحلہ وار کیا جائے گا کیونکہ اگر یکدم قیمتیں بڑھائیں تو عوام کا شدید ردعمل سامنے آئے گا ۔ڈالر کی قیمتیں بڑھنے سے مہنگائی کا طوفان آچکا ہے ۔اس لئے یکم نومبر کے بعد یکم دسمبر کو بھی قیمتوں میں اضافہ کیاجائے گا ۔ اس وقت سپرپٹرول کی قیمت تقریباً94روپے فی لیٹر ہے۔مرحلہ وار قیمت میں اضافے کے بعدسپر پٹرول کی قیمت 114روپے فی لیٹر تک پہنچ جائے گی۔واضح رہے کہ پٹرول کی قیمتوں میں مزید اضافے سے مہنگائی کاایک اورطوفان آئے گا ۔ ٹرانسپورٹ سمیت ہر چیز مہنگی ہو جائے گی ۔ تحریک انصاف کی حکومت پریشان ہے کہ وہ مہنگائی کے حوالے سے مسلم لیگ (ن) کی حکومت پر مسلسل تنقید کرتی رہی ہے مگر اب خود مسلسل مہنگائی کرتی چلی جارہی ہے۔ گیس کی قیمتوں میں 143فیصد تک اضافہ ہو چکا ہے ۔ پٹرول کی قیمتیں بھی مزید بڑھائی جا سکتی ہیں ۔ ڈالر ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر جا پہنچا ہے ۔ حکومت کو اپوزیشن جماعتوں کی شدید تنقید اور عوام کے ردعمل کا سامنا کرنا پڑے گا۔ مزید براں سپریم کورٹ آف پاکستان بھی ملک میں پٹرول کی زائد قیمتوں اور اس پر عائد طرح طرح کے ٹیکسز اور ڈیوٹیز کا از خود نوٹس لے چکی ہے اور یہ کیس زیر سماعت ہے۔

مرحلہ وار

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...