پاکستان انجینئر کونسل کی بھاشا ڈیم ، 5سو ارب روپے میں تعمیر کرنے کی پیشکش

پاکستان انجینئر کونسل کی بھاشا ڈیم ، 5سو ارب روپے میں تعمیر کرنے کی پیشکش

  



اسلام آباد(آن لائن)پاکستان انجینئرنگ کونسل نے بھاشا ڈیم کی تعمیر پانچ سو ارب روپے میں تعمیر کرنے کی پیشکش کردی ہے ۔پاکستان انجینئرنگ کونسل پاکستان کے دو سو ارب روپے بچاکر دینے کے لئے تیار ہے ۔پالیسی سازی میں انجنیئر شامل نہ ہونے کی وجہ سے گردشی قرضوں میں اضافہ ہورہا ہے جمعرات کو پاکستان انجینئرنگ کونسل کے چیرمین انجینئر جاوید سلیم قریشی نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے پاس ابھی تک ملک میں 21 اور 22 گریڈ پر کوئی انجینئر نہیں ہے جبکہ ملک کی پالیسی 21 اور 22 گریڈ کے آفیسر بناتے ہیں ملکی قانون کے مطابق اگر کوئی نان انجینئر ہو اور انجینئر کا کام کرتا ہے تو اسے 6 ماہ قید کی سزا ہوتی ہے جبکہ پاکستان میں بڑے منصوبوں کی انجینئرنگ پالیسیاں نان انجینئرز بنا رہے ہیں دیامر بھاشا ڈیم کی تعمیر کو انجینئرنگ کونسل ویلکم کرتی ہے مگر اس میں انجینیرز کے کردار کو انجینئرز کو ہی دیا جانا چاہئیے مگر ایک بات واضح ہے کہ چندے سے دیامر بھاشا ڈیم بننے میں بہت دیر ہو جائے گی انہوں نے کہا کہ دیامر بھاشا ڈیم کو سکوک بانڈز کے زریعے جلدی تعمیر کیا جا سکتا ہے جس سے بجلی کی لاگت تھرمل سے سستی ہو گی انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ جتنیپروفیشنل انجینئرز کی جگہ نان انجینئرز ہیں ان کو فوری ہٹایا جائیگریڈ 20 پر چالیس فیصد پوسٹیں پروفیشنل انجینئرز کی بنتی ہیں نان انجینئرز کی تعیناتی کی وجہ سے سرکلر ڈیٹ 1.5 ٹریلین تک پہنچ گیا ہے جاوید سلیم قریشی نے کہا کہ حکومت فوری طور پر سپریم کورٹ کے فیصلے پر عملدرآمد کرائے توانائی سمیت پانچ وزراتوں میں انجینئرز کو شامل کیا جائے پاکستان انجنیئرنگ کونسل مقامی انجنیئرز کے لئے عالمی تربیت کا آغاز کر رہا ہیبھاشا ڈیم پاکستان کی لائف لائن ہیپاکستان انجینئرنگ کونسل پانچ سو ارب میں بھاشا ڈیم بنانے کے لئے تیار ہے۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...