نااہلی کیس،عدالت کی فیصل واوڈا کو پیش ہونے کی آخری مہلت

نااہلی کیس،عدالت کی فیصل واوڈا کو پیش ہونے کی آخری مہلت

  



کراچی (اسٹاف رپورٹر)سندھ ہائی کورٹ میں وفاقی وزیر برائے آبی وسائل فیصل واوڈا کی نااہلی سے متعلق درخواست کا معاملہ،عدالت نے فیصل واوڈا کو پیش ہونے کی آخری مہلت دے دی ہے ۔جمعرات کو سندھ ہائی کورٹ میں فیصل واوڈا کے خلاف قادر خان مندوخیل کی درخواست کی سماعت ہوئی جہاں عدالت نے فیصل واوڈا کو پیش ہونے کی آخری مہلت دیتے ہوئے فیصل واوڈا کو اسپیکر قومی اسمبلی کے ذریعے نوٹس بھجوانے کا حکم دیا عدالت کا کہنا تھا کہ فیصل واوڈا کو وزارت برائے آبی وسائل کے ذریعے بھی نوٹس بھیجا جائے, عدالت نے تنبیہ کی کہ 13 نومبر تک فیصل واوڈا پیش نہ ہوئے تو دستیاب شواہد پر فیصلہ کر دیں گے, عدالت نے سماعت 13 نومبر تک ملتوی کردی،سماعت شروع ہوئی تو عدالت نے استفسار کیا کہ فیصل واوڈا کہاں ہیں,عدالتی حکم پر کمرہ عدالت کے باہر فیصل واوڈا پارٹی کی بلند آواز لگائی گئی لیکن فیصل واوڈا پیش ہوئے نہ ان کے وکیل،قادر خان مندوخیل نے اپنی درخواست میں موقف اپنا ہے کہ دو روز کے لیے قومی اسمبلی کی رکنیت معطل کر دیں تو یہ خود بخود پیش ہوں گے,فیصل واوڈا کے خلاف امریکی شہری ہونے کے تمام شواہد موجود ہیں,فیصل واوڈا عدالتی نوٹس تک موصول نہیں کر رہے,فیصل واوڈا نے وزرات کو حکم دیا ہے کہ کوئی بھی نوٹس وصول ہی نہ کیا جائے,فیصل واوڈا کا انتخابی ریکارڈ تحویل میں لیا جائے, ٹمپرنگ کا خدشہ ہے,عدالت نے فیصل واوڈا کی دوہری شہریت ترک کرنے سے متعلق دستاویزات طلب کر رکھی ہیں،فیصل واوڈا آرٹیکل 62 پر پورا نہیں اترتے,فیصل واوڈا نے اپنے حلف نامے میں برطانیہ, دبئی اور ملائشیا کی جائیداد قرض شدہ ظاہر کی,جبکہ کوئی اکاونٹ ظاہر نہیں کی کاغذات نامزدگی میں کسی فارن اکاونٹ کا ذکر نہیں ہے,اس غیرملکی جائیدادکی منی ٹریل نہیں دی گئی,ریٹرننگ افسرکے ریکارڈمیں کسی غیرملکی جائیداد کا ذکر نہیں ہے,اربوں کی جائیدادیں رکھنے والے فیصل واوڈا نے 2015 میں کوئی ٹیکس نہیں دیا, ریٹرننگ افسر نے فیصل واوڈا کے خلاف یہ کہہ کر درخواست مستردکی کہ اس نیدوہری شہریت چھوڑدی مگر کوئی کاغذات ریکارڈ پر موجود نہیں،ریٹرننگ افسر کے ریکارڈ میں امریکی شہریت سرینڈر کرنے کا کوئی ریکارڈ نہیں,

مزید : کراچی صفحہ اول