موٹاپے کی شرح میں پاکستان 188ممالک میں سے 9ویں نمبر پر ہے،ڈاکٹر طاہر رسول

موٹاپے کی شرح میں پاکستان 188ممالک میں سے 9ویں نمبر پر ہے،ڈاکٹر طاہر رسول

لاہور(لیڈی رپورٹر ) اخوت ہیلتھ سروسز کے زیر اہتمام موٹاپے کے عالمی دن کے موقع پر فارمیوو فارما سیوٹیکل کے تعاون سے ایک سیمیناراورآگاہی واک میں ڈاکٹر طاہر رسول، ایسوسی ایٹ پروفیسرڈاکٹر نازیہ ایوب، ڈاکٹروسیم عباس، ڈاکٹر مہوش رشید،قیصر حمید، پروگرام کوارڈینیٹرروبی ہاشم‘ماہم الفت کے علاوہ مریضوں اور لوگوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔ تقریب کے مہمانِ خصوصی ڈاکٹر طاہر رسول نے حاضرین کو بتایا کہ موٹاپا دنیا کی تیزی سے بڑھتی ہوئی بیماریوں میں سے ایک ہے۔ حال ہی میں امریکن میڈیکل ایسوسی ایشن نے موٹاپے کو باقاعدہ طور پر ایک بیماری قرار دیا ہے۔ موٹاپے کی شرح میں پاکستان 188ممالک میں سے 9نمبر پر ہے۔ڈاکٹرطاہر رسول نے موٹاپے سے ہونے والی بیماریوں سے حاضرین کو آگاہ کرتے کہاکہ موٹاپا بہت سی بیماریوں کا پیش خیمہ بن سکتا ہے۔ مثلاً دل کے امراض، ہائی بلڈ پریشر، جوڑوں کے امراض، امراضِ نسواں، کینسر، جگر اور آنتوں کے امراض، سانس لینے میں دشواری اور فالج جیسے مرض شامل ہیں۔ ڈاکٹروسیم عباس نے کہاکہ اگر آپ کا وزن آپ کے قد کے حساب سے زیادہ ہے یا دوسرے لفظوں میں آپ کا BMI (باڈی ماس انڈیکس) 23سے زیادہ ہے تو آپ موٹاپے کا شکار ہیں۔ڈاکٹر افشین سہیل نے موٹاپے کی وجوہات بیان کرتے ہوئے کہا کہ غیر صحت مند طرز ِزندگی، چینی اور چکنائیوں سے بھر پور غذائیں، بھوک سے زیادہ کھانا،بے وقت کھانا، فاسٹ فوڈاور کولڈ ڈرنکس کا استعمال اور سیر یا ورزش کا نہ کرنا ہے۔ ڈاکٹر مہوش رشیدنے موٹاپے کے بچاؤ اور علاج پر بات کرتے ہوئے کہا کہ روزانہ سیر اور ورزش کریں۔ کھانے سے پہلے پانی کا استعمال کریں۔ غیر معیاری کھانوں سے پرہیز کریں

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...