مقبوض کشمیر، عوام نے کرفیو توڑ ڈالا، مظاہرے، فورسز کی شیلنگ سے متعدد نوجوان زخمی 

  مقبوض کشمیر، عوام نے کرفیو توڑ ڈالا، مظاہرے، فورسز کی شیلنگ سے متعدد ...

سرینگر/واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی) بھارتی قابض سرکار کی طرف سے پابند سلاسل کرنے کے باوجود مقبوضہ کشمیر میں شہریوں کی بڑی تعداد کرفیو روند کر باہر نکل آئی اوربھارت مخالف، قابض فوج کے خلاف نعرے لگائے۔ کشمیر کی فضا آزادی کے نعروں سے گونج اٹھی، مظاہرین نے وادی کی خصوصی حیثیت بحال کرنیکی صدائیں بلند کیں۔اس موقع پر مظاہرین کا کہنا تھا کہ زندگی کی آخری سانس تک جدوجہد آزادی کے لیے لڑتے رہیں گے، پاکستانی وزیراعظم عمران خان کا بھی شکریہ ادا کرتے ہیں جنہوں نے ہمارا کیس دنیا کے سامنے رکھا اور ہمارے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا۔نماز جمعہ کے بعد مظاہرین کی بڑی تعداد احتجاج کے لیے باہر نکل آئی، جن علاقوں میں زیادہ مظاہرے کیے گئے ان میں سرینگر، بڈگام، گاندربل، اسلام آباد، پلوامہ، کولگام، شوپیاں، بانڈی پورہ، بارہمولا، کپواڑہ سمیت دیگر علاقے شامل ہیں۔مظاہرین کے دوران بھارتی قابض فوج بے بس نظر آئی، مظاہرین آنسو گیس، پیلٹ گنز بھی استعمال کیے تاہم نوجوانوں کی بڑی تعداد نعرے لگاتی رہی۔اس دوران متعدد نوجوانوں زخمی بھی ہوئے تاہم زخمی ہونے کے باوجود نوجوان مظاہروں میں بھارت مخالف نعرے لگاتے رہے۔ جنہیں بعد میں طبی امداد کیلیے ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔مقبوضہ کشمیر میں زندگی کی قید ہوئے 69 روز گزر گئے ہیں، شہری بنیادی سہولیات سے محروم ہیں، ہسپتال ویران ہیں، مریض پریشان ہیں، خوراک، ادویات کا سٹاک ختم ہو گیا ہے، مارکیٹیں، تعلیمی ادارے، دکانیں بھی بند ہیں۔ موبائل فون، لینڈ لائن، انٹر نیٹ سمیت دیگر سہولتیں تاحال بند رکھی ہوئی ہیں۔کشمیر میڈیاسروس کے مطا بق کشمیریوں کو سخت پابندیوں کے باعث خوراک اور ادویات سمیت اشیائے ضروریہ کی شدید قلت کا سامنا ہے، مسلسل لاک ڈاؤن اور ایمبولینسوں کی عدم دستیابی کی وجہ سے بعض افرادبروقت ہسپتال نہ لے جانے کے باعث انتقال کر گئے ہیں۔کشمیر میڈیاسروس کے مطا بق لوگوں کو موبائل او ر انٹرنیٹ سروسز سمیت ذرائع مواصلات اورپبلک ٹرانسپورٹ معطل ہونے کے باعث مقبوضہ علاقے اور مقبوضہ علاقے سے باہر اپنے پیاروں کے بارے میں کوئی اطلاع نہیں ہے۔دوسری جانب امریکی سینیٹر میگی حسن نے ٹویٹر پر جاری ایک پیغام میں کشمیر میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کے بارے میں کہاکہ دونوں اطراف صورتحال میں بہتری کے طریقے تلاش کرناضروری ہے۔میگی حسن نے کہاکہ وہ اب بھارت کا دورہ کر رہی ہیں جہاں وہ صورتحال اور بین الاقوامی تجارت کے بارے میں مزید تبادلہ خیال کیلئے حکام سے ملاقاتیں کریں گی۔ 

مقبوضہ کشمیر/امریکی سینیٹر

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) مقبوضہ کشمیر کے مظلوم عوام پر بھارتی مظالم کیخلاف پاکستان بھر میں نکالی گئی مختلف ریلیوں میں مودی سرکار کے خلاف شدید احتجاج کیا گیا۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ کشمیریوں کی حمایت جاری رکھیں گے۔ عالمی برادری وادی میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا نوٹس لے۔کشمیریوں سے اظہارِ یکجہتی کیلئے لاہور میں ڈی سی کی قیادت میں ریلی نکالی گئی۔ شرکا وادی میں مظالم کیخلاف نعرے لگاتے رہے۔ سرگودھا، چشتیاں اور دیگر کئی شہروں میں بھی کشمیریوں سے یکجہتی کا اظہار کیا گیا۔ننکانہ صاحب میں کشمیری بھائیوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کیلئے ہاتھوں کی زنجیر بنائی گئی۔ مظاہرے میں سکھ کمیونٹی بھی شریک ہوئی۔ڈیرہ بگٹی میں کشمیری بھائیوں سے اظہار یکجہتی کیلئے ریلی نکالی گئی میں مختلف مکتب فکر کے افراد کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ فضا کشمیربنے گا پاکستان کے نعروں سے گونج اٹھی۔کرک میں شہری کشمیر میں بھارتی مظالم پر سراپا احتجاج بن گئے۔ ریلی کے شرکا نے عالمی برادری سے وادی میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر نوٹس لینے کا مطالبہ کیا۔

مظاہرے/ریلیاں 

مزید : صفحہ اول


loading...