مہنگائی،آج سے وزیر اعظم ایکشن،اشیائے ضروریہ کی قیمتیں جانچنے کا ہدف ٹائیگر فورس کے حوالے،روزانہ پورٹل پر بھیجیں گے،ذخیرہ اندوزوں کی نشاندہی کرینگے:عمران خان

مہنگائی،آج سے وزیر اعظم ایکشن،اشیائے ضروریہ کی قیمتیں جانچنے کا ہدف ٹائیگر ...

  

 اسلام آباد(سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک،نیوز ایجنسیاں) ملک میں مہنگائی کیخلاف وزیراعظم عمران خان کا ایکشن پلان تیار ہوگیا، اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں کمی کیلئے فیصلوں پر عملدرآمدآج بروز پیر  سے ہوگا۔ تفصیلات کے مطابق ملک میں مہنگائی میں کمی کیلئے وزیراعظم کا پلان تیار ہوچکا ہے، اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں کمی کیلئے فیصلوں پرعملدرآمدآج پیر سے ہوگا، پلان کے تحت حکومتی اداروں اور ریاستی وسا ئل کے بھرپور استعمال کا فیصلہ کیا گیا ہے، اس ضمن میں ٹائیگر فورس بھی استعمال ہوگی۔ وزیراعظم نے ایک بار پھر ٹائیگر فورس کو میدان میں اتارنے کا فیصلہ کیا ہے، ٹائیگر فورس کو ذخیرہ اندوزوں کی نشاندہی کا ٹا سک سونپے جانے کا امکان ہے۔ عمران خان کی معاون خصوصی یوتھ افیئرز عثمان ڈار سے مشاورت مکمل ہوگئی۔ وزیراعظم نے ٹائیگرفورس کا بڑا کنونشن بلانے کی ہدایت کر دی۔کنونشن آئندہ ہفتے اسلام آباد میں ہوگا جس میں ٹائیگر فورس کے جوان شریک ہوں گے۔ وزیراعظم عمران خان نوجوانوں کی حکومتی ایکشن پلان پر رہنمائی کریں گے۔ وزیراعظم سے  گائیڈ لائنز ملتے ہی عثمان ڈار نے کنونشن کی تیاریاں شروع کر دیں۔وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ٹائیگر فورس اپنے علاقوں میں روزانہ آٹا،دال،چینی اور گھی کی قیمتیں چیک کرے۔سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنی ٹویٹ میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ آئندہ ہفتے کے روز ٹائیگر فورس سے کنونش سینٹر میں ملاقات کروں گا، اس دوران ٹائیگر فورس اپنے علاقوں میں روزانہ آٹا، دال، چینی اور گھی کی قیمتیں چیک کرے۔وزیراعظم نے کہا کہ ٹائیگر فورس کے رضاکار اشیائے ضروریہ کی قیمتیں روزانہ ٹائیگر فورس پورٹل پر بھیجیں، ان اشیاء کی قیمتوں کے معاملے پر بات ہفتے کے روز ہونے والی ملاقات میں کریں گے

عمران خان

اسلام آباد، پشاور، کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)ملک بھر میں آٹے کا بحران شدت اختیار گیا ہے جس کے باعث شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔لاہور میں آٹے کے بحران کے باعث تندور مالکان نے سادہ روٹی کی قیمت بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے جس کے بعد کل سے روٹی کی قیمت 10 روپے کیے جانے کا امکان ہے۔صدر نان بائی ایسوسی ایشن کہتے ہیں کہ 8 روپے کی روٹی کی قیمت بڑھانا مجبوری ہے، ناقص کوالٹی آٹے کی 15 کلو کی تھیلی بھی 950 روپے سے تجاوز کر گئی ہے جب کہ 860 روپے ملنے والا 20 کلو کا بیگ کہیں دستیاب نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ گزشتہ 10 سال کے دوران روٹی کی قیمت 6 روپے پر ہی ٹکی رہی لیکن صرف رواں سال روٹی سمیت ہر شے کی قیمت میں کئی بار اضافہ ہو چکا ہے۔دوسری جانب پشاور میں بھی آٹے کی بڑھتی ہوئی قیمتوں سے شہری پریشان ہیں اور  استطاعت نہ رکھنے والے شہریوں کو سرکاری آٹے کے حصول کے لیے لمبی قطاروں میں کھڑا رہنا پڑتا ہے۔شہری شناختی کارڈ کی فوٹو کاپی جمع کر کے 20 کلو کا تھیلا 860 روپے میں مخصوص ڈیلرز سے خریدتے ہیں۔آٹا بحران کی صورتحال پر دکانداروں کا کہنا ہے کہ  آٹا ڈیلرز  پنجاب سے آٹا مہنگے داموں ملنے کا رونا روتے دکھائی دیتے ہیں۔دکانداروں نے بتایا کہ 20 کلو آٹے کا تھیلا 1320جب کہ فائن آٹے کا تھیلا 1400 روپے میں فروخت کرتے ہیں جس سے وہ صرف 10 سے 15 روپے منافع کماتے ہیں۔فلورملز ایسوسی ایشن کے چیئرمین عاصم رضا نے کہا ہے کہ پنجاب کی اوپن مارکیٹ میں درآمدی گندم ختم ہو گئی ہے،سرکاری گوداموں سے930 ملزکو محدود حد تک گندم ریلیز کی جاری ہے۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ محکمہ خوراک کو اپنی پالیسیوں پر نظرثانی کرنے کی ضرورت ہے بصورت دیگر پنجاب میں آٹے کی صورتحال بہتر نہیں ہو گی، نجی ٹی وی کے مطابق کین کمشنر پنجاب زمان وٹو نے کہا کہ وفاق کا یوکرائن سے آنے والی گندم کے پہلے 2 جہاز خیبرپختونخوا ہ کودینے کا حکم ہے،تیسرے جہازکے ذریعے آنے والی گندم پاسکو کے حوالے کی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ محکمہ خوراک پنجاب کی جانب سے7لاکھ ٹن گندم کی ڈیمانڈ کی گئی تھی جبکہ خیبرپختونخواکی جانب سے ساڑھے 4 لاکھ ٹن گندم کی ڈیمانڈ بھیجی گئی تھی۔یوکرین سے آنے والے 55ہزار میٹرک ٹن گندم کی سپلائی صوبیخیبر پختونخوا کو آج سے شروع کردی جائیگی جبکہ یوکرین سے آنے والے مزید 2جہاز بھی صوبائی حکومت کو دینے کا فیصلہ کیا  گیاہے خیبر پختونخوا حکومت نے ساڑھے چار لاکھ ٹن گندم کی ڈیمانڈ وفاق کو کی تھی خیبر پختونخوا میں آٹا بحران پر قابو پانے کیلئے صوبائی حکومت نے یونین کونسل کی  سطح پر آٹے کی  سپلائی کا فیصلہ کیا ہے یوکرین سے آنے والے پہلا جہاز میں 55ہزار میٹرک ٹن گندم کراچی پہنچ گئی ہے جس کی سپلائی آئندہ چند رو میں خیبر پختونخواکے لئے شروع ہو جائیگی اور انہیں سرکاری گودام میں منتقل کیا جائے گا۔ جبکہ صوبائی دارلحکومت پشاور میں سرکاری آٹا کا بحران پر تاحال قابو نہیں پایا گیا ہے اشرف روڈ،رامپورہ میں لائنیں لگی ہو ئی ہیں تاجروں کی جانب سے  سرکاری آٹے کے کوٹے کو بلیک میں اور منظور نظر افراد میں تقسیم کرنے کے الزامات لگ رہے ہیں۔ملک بھر میں اشیائے صرف کی قیمتیں عوام کی پہنچ سے دور نکل گئیں۔ آٹا، دالیں، چینی، سبزی اور گوشت سمیت کوئی بھی چیز سرکاری نرخ پر دستیاب نہیں اور سستے باز ار بھی مہنگے ہوگئے جب کہ دکانداروں نے سرکاری ریٹ لسٹ ہوا میں اڑادی ہے۔ پشاور میں آلو 40 روپے سے80 روپے فی کلو پر پہنچ گئے، کوئٹہ میں مرغی کا گوشت 30 روپے فی کلو اضافے سے 270 روپیکا ہوگاا جب کہ کراچی میں مرغی کا گوشت 330 روپے فی کلو میں دستیاب ہے۔ایک درجن انڈوں کی قیمت میں 10 روپے کا اضافہ ہوا ہے جب کہ بکرے کاگوشت سرکاری نرخ سے 400 روپے فی کلو زائد تک فروخت ہورہا ہے۔سبزیوں کی بات کریں تو یوں لگتا ہے کہ اب یہ بھی غریب کی پہنچ سے دور ہوگئی ہیں، کراچی میں جہاں مرغی کا گوشت 330 روپے کلو ہے تو مٹر 320 روپے کلو پر فروخت ہورہے ہیں، ٹماٹر 160 روپے کلو جب کہ ادرک 600 روپے کلو میں دستیاب ہے۔

آٹا بحران

مزید :

صفحہ اول -