سیلز تیکس کو علیحدہ زون بنایا جائے:پاکستان ٹیکس بار

سیلز تیکس کو علیحدہ زون بنایا جائے:پاکستان ٹیکس بار

  

 لاہور(این این آئی) پاکستان ٹیکس بار ایسوسی ایشن نے سیلز ٹیکس کو علیحدہ زون بنا نے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس اقدام سے ایک ہزار گنا تک زیادہ ٹیکس وصول کیا جاسکتاہے۔ پاکستان ٹیکس بار ایسوسی ایشن کے صدر آفتاب ناگرہ،سینئر نائب صدر قاری حبیب الرحمان زبیری، ارشد نواز مان،سید تنصیربخاری،سہیل اختر،شہبازصدیق،شہبازقادر،غلام محمودانصاری سمیت دیگر نے وزیراعظم عمران خا ن اورچیئرمین ایف بی آر کو خط کے ذریعے اصلاحات کی تجویز پیش کرتے ہوئے کہاہے کہ حکومت بیشک ٹیکس اہداف بڑھادے لیکن اس کی مناسبت سے اقدامات بھی اٹھائے۔ جس کے لئے ممبر سیلزٹیکس کی نگرانی میں پورے پاکستان کے آر ٹی اوز، سی ٹی او ز  اورایل ٹی یوزمیں خود مختار زونزبناکرتربیت یافتہ اورپروفیشنل سیلز ٹیکس افسران تعینات کئے جائیں۔ 74سالوں میں ساری ٹیکس مشینری مل کربھی 2لاکھ لوگوں کوسیلز ٹیکس میں رجسٹرڈنہیں کر ا سکی جو حکومت اورایف بی آرکے لئے لمحہ فکریہ ہونا چاہیے۔ حکومت ہر سال بجٹ میں انکم ٹیکس کے محصولات کا70سے 75فیصد اضافہ کرتی ہے لیکن  سیلزٹیکس کی وصولیوں میں کسٹم سطح کے علاوہ 14سے20فیصداضافہ کیا جاتا  ہے۔ جون1995سے آڈٹ پر سیلز ٹیکس نظام کے ذریعے سیلز ٹیکس کی وصولی کے لئے ایف بی آر میں اسیسٹمنٹ سسٹم قائم کیا گیا جس میں پروفیشنل آئی ٹی کے ماہرافسرن تیزکام سرانجام دے رہے تھے لیکن2009 ء میں ان لینڈ ٹیکس میں ضم کرکے کارکردگی صفرپر لے گئے،یہی وجہ ہے کہ پاکستان سے آج تک ڈیڑھ کروڑ لوگرجسٹرڈ نہیں ہیں۔ انکم ٹیکس،سیلز ٹیکس اورفیڈرل ایکسائز ڈیوٹی کی فطرت علیحدہ ہے،انکم ٹیکس براہ راست جبکہ سیلز ٹیکس بالواسطہ ہے، جب ان کی  فطرت علیحدہ ہے تو ان کو ڈیپارٹمنٹ میں بھی علیحدہ ہونا چاہیے،الگ زون بنا کر ممبرسیلز ٹیکس کی زیر نگرانی نظام قائم کیا جائے تو ایک ہزارگناسیلز ٹیکس زیادہ وصول ہوسکتاہے۔ جوبی ٹی بی پچاس سال میں کچھ نہ کر سکی وہ کمی سیلز ٹیکس نظام کے علیحدہ زون بنا کر پوری کی جا سکتی ہے۔ 

مزید :

کامرس -