جتوئی:90فیصد واٹر فلٹریشن پلانٹس  بند، مضر صحت پانی کا استعمال معمول

  جتوئی:90فیصد واٹر فلٹریشن پلانٹس  بند، مضر صحت پانی کا استعمال معمول

  

  جتوئی (نمائندہ پاکستان)   تحصیل جتوئی میں سرکاری سکول و (بقیہ نمبر63صفحہ7پر)

سرکاری عمارتوں اور مختلف مقامات پر خطیر رقم خرچ کرکے لگائے گئے 90 فیصد واٹرفلٹریشن پلانٹ ضلعی انتظامیہ اور میونسپل کمیٹی جتوئی کی عدم توجہی کے باعث بند ہے  تفصیلات کے مطابق جتوئی کے شہری محمد قاسم  محمد آصف محمد اشرف   محمد شاہد  محمد ساجد محمد نمعان اکرم محمد سجاد احمد ودیگر نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ تحصیل جتوئی کے مختلف سرکاری سکول و سرکاری عمارتوں کے واٹرفلڑیشن پلانٹس کی ٹونیناں موٹریں اور جنگلے تک چوری ہوگئے جبکہواٹرفلڑیشن پلانٹ کے کمروں پر منشیات کے عادی افراد نے ڈیرے جمالئے ہیں سرکاری ستطع پر لگائے گئے واٹرفلڑہشن بند ہونے سے شہریوں کی مشکلات میں اضافہ ہو گیا شہری پینے کے صاف پانی کے حصول کیلئے نہروں کے کناروں پر لگے نلکوں حضرات کی جانب سے لگائے گئے واٹرفلڑیشن پلانٹس پر صاف پانی کے حصول شہریوں کارش لگ گیا موجودہ ملکی صورتحال اور کرونا کے پیش نظر ہے اور انہوں نے کہا کہ صاف پانی مکس ہونے لگا ہے جس کے باعث شہری ہیپا ٹائٹس جیسے امراض میں مبتلا ہو کر ہسپتال کا رخ کرنے پر مجبور ہیں شہریوں نے اعلی حکام سے فوری طور پر نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -