حالتِ حال میں کیا رو کے سناؤں تجھ کو| مبشر سعید |

حالتِ حال میں کیا رو کے سناؤں تجھ کو| مبشر سعید |
حالتِ حال میں کیا رو کے سناؤں تجھ کو| مبشر سعید |

  

حالتِ حال میں کیا رو کے سناؤں تجھ کو

تو نظر آئے تو پلکوں پہ بٹھاؤں تجھ کو

صاحبِ ہوش کو  مدہوش بنانے کے لئے

آیتِ حسن پڑھوں دیکھتا جاؤں تجھ کو

تو نہیں مانتا مٹی کا دھواں ہو جانا

تو ابھی رقص کروں، ہو کے دکھاؤں تجھ کو؟

کر لیا ایک محبت پہ گزارا میں نے

چاہتا تھا کہ میں پورا بھی تو آؤں تجھ کو

اب مرا عشق دھمالوں سے کہیں آگے ہے

 اب ضروری ہے کہ میں وجد میں لاؤں تجھ کو

کیوں کسی اور کی آنکھوں کا قصیدہ لکھوں

کیوں کسی اور کی مدحت سے جلاؤں تجھ کو

عین ممکن ہے ترے عشق میں ضم ہو جاؤں

اور پھر دھیان کی جنت میں نہ لاؤں تجھ کو

تو  نے اِک بار بڑے پیار سے بولا تھا سعیؔد

میرا دل ہے کبھی سینے سے لگاؤں تجھ کو

شاعر: مبشر سعید

(مجموعۂ کلام:خواب گاہ میں ریت؛سالِ اشاعت،  2016)

Haalat-e-Haal   Pe   Kaya   Ro   K   Sunaaun   Tujh   Ko

Tu   Nazar    Aaey   To   Palkon   Pe   Bithaaun   Tujh   Ko

Saahib-e-Hosh   Ko   Madhosh   Banaanay   K   Liay

Aayat-e-Husn   Parrhun   Dekhta   Jaaun   Tujh   Ko

 Tu   Nahen   Maanta   Matti    Ka    Dhuaan    Ho   Jaana

To   Abhi   Raqs   Karun   ,   Ho   K   Dikhaaun Tujh   Ko

 Kar   Liya    Aik   Muhabbat    Pe   Guzaara   Main   Nay

Chaahta    Tha    Keh   Main   Poora   Bhi  To   Aaun   Tujh   Ko

 Ab   Mira   Eshq   Dhamaalon   Say    Kahen    Aagay   Hay

Ab    Zaroori    Hay   Keh    Main   Wajd   Men   Laaun   Tujh   Ko

 Kiun   Kisi   Aor   Ki   Aankhon   Ka    Qaseeda   Likhun

Kiun   Kisi   Aor   Ki   Midhat   Say   Jalaaun   Tujh   Ko

 Ain   Mumkin   Hay   Tiray    Eshq    Men   Zamm   Ho   Jaaun

Aor   Phir   Dhayaan   Ki   Jannat   Men   Na   Laaun   Tujh   Ko

Uss     Nay   Ik   Baar    Barray  Payaar   Say   Bola   Tha   SAEED

 Mera   Dil   Hay   Kabhi     Seenay   Say   Lagaaun   Tujh   Ko

 

  Poet: Mubashir   Saeed

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -