یوں بھی چھپتا ہے بھلا، وجد میں آیا ہوا رنگ؟| مبشر سعید |

یوں بھی چھپتا ہے بھلا، وجد میں آیا ہوا رنگ؟| مبشر سعید |
یوں بھی چھپتا ہے بھلا، وجد میں آیا ہوا رنگ؟| مبشر سعید |

  

یوں بھی چھپتا ہے بھلا، وجد میں آیا ہوا رنگ؟

سب کو دکھنے لگا احساس پہ چھایا ہوا رنگ

قیمتی شے کی طرح میں نے سنبھالا ہوا ہے

تیری پوشاک کے رنگوں سے چرایا ہوا رنگ

یعنی پھر میرے مقدر میں وہ ساعت آئی

پہنا ہے یار نے اب میرا بتایا ہوا رنگ

رقص کرتی ہوئی بل کھاتی ہوئی ڈالی پر

آنکھ نے دیکھا ہے شبنم میں نہایا ہوا رنگ

سرمئی شام ڈھلی باغ میں خوشبو اُتری

یاد آیا تری قربت کا بھلایا ہوا رنگ

زرد لمحوں میں اگر لفظ خموشی اوڑھیں

حال کہتا ہے مری آنکھ میں آیا  ہوا رنگ

اتنی توقیر جو میری ہے زمانے میں سعید

رنگ ہے مجھ پہ یہ مرشد کا چڑھایا  ہوا رنگ

شاعر: مبشر سعید

(مجموعۂ کلام:خواب گاہ میں ریت؛سالِ اشاعت،  2016)

Yun   Bhi   Chhupta   Hay   Bhala   Wajd   Men   Aaya   Hua   Rang?

Sab    Ko Dikhnay   Laga   Ehsaas   Pe   Chhaaya   Hua   Rang

 Qeemati   Shay   Ki   Tarah    Main   Nay   Sanbhaala   Hua   Hay

Teri   Poshaak  K   Rangon   Say   Churaaya   Hua   Rang

 Yaani   Phir   Meray   Muqaddar   Men   Wo   Saa'at   Aai

Pehna   Hay   Yaar   Nay   Ab   Mera  Bataaya   Hua   Rang

Raqs   Karti   Hui   Ball   Khaati   Hui   Daali   Par

Aankh   Nay   Dekha   Hay   Shabnam   Men   Nahaaya   Hua   Rang

 Surmai    Shaam   Dhali   Baagh    Men   Khushbu   Utri

Yaad   Aaya   Teri   Qurbat   Ka   Bhulaaya   Hua   Rang

 Zard   Lahmon   Men   Agar   Lafz    Khamoshi   Orrhen

Haal   Kehta   Hay   Miri   Aankh   Men   Aaya   Hua   Rang

 Itni   Taoqeer   Jo  Meri   Hay    Zamaanay   Mem   SAEED

Rang   Hay   Mujh    Pe   Yeh   Murshid   Ka   Charrhaaya   Hua   Rang

 

Poet: Mubashir   Saeed 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -