ہجر کی رُت کا طرفدار بھی ہو سکتا ہے| مبشر سعید |

ہجر کی رُت کا طرفدار بھی ہو سکتا ہے| مبشر سعید |
ہجر کی رُت کا طرفدار بھی ہو سکتا ہے| مبشر سعید |

  

ہجر کی رُت کا طرفدار بھی ہو سکتا ہے

دل، خسارے سے ثمربار بھی ہو سکتا ہے

کیا ضروری ہے فقط دشت میں وحشت ہو میاں!

یہ تماشا سرِ بازار بھی ہو سکتا ہے

دکھ پرندوں کی طرح شور مچا سکتے ہیں

ہجر  پیڑوں پہ نمودار بھی ہو سکتا ہے

میری ہر رات کو فردوس بنانے والے!

دل  ترے خواب سے بیدار بھی ہو سکتا ہے

یہ ضروری تو نہیں سامنے کھل کر آئے

میرا دشمن پسِ دیوار بھی ہو سکتا ہے

شاعر: مبشر سعید

(مجموعۂ کلام:خواب گاہ میں ریت؛سالِ اشاعت،  2016)

Hijr   Ki   Rut   Ka  Tarafdaar    Bhi   Ho   Sakta   Hay

Dil    Khasaaray   Say   Samar  Baar    Bhi   Ho   Sakta   Hay

 Kaya   Zaroori   Hay   Faqat   Dasht   Men   Wehshat   Ho   Miyaan!

Yeh   Tamaasha   Sar-e-Bazaar    Bhi   Ho   Sakta   Hay

 Dukh   Parindon   Ki   Tarah   Shor   Machaa   Saktay   Hen

Hijr   Pairron   Pe   Namoodaar    Bhi   Ho   Sakta   Hay

 

Meri   Har   Raat   Ko   Firdous   Banaanay Waalay

Dil   Tiray   Khaab   Say   Baidaar    Bhi   Ho   Sakta   Hay

 Yeh   Zaroori   To    Nahen   Saamnay    Khul   Kar   Aaey

Mera    Dushman   Pas-e-Dewaar    Bhi   Ho   Sakta   Hay

 Poet: Mubashir   Saeed

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -