مسرتوں کو یہ اہلِ ہوس نہ کھو دیتے| مجروح سلطانپوری |

مسرتوں کو یہ اہلِ ہوس نہ کھو دیتے| مجروح سلطانپوری |
مسرتوں کو یہ اہلِ ہوس نہ کھو دیتے| مجروح سلطانپوری |

  

مسرتوں کو یہ اہلِ ہوس نہ کھو دیتے

جو ہر خوشی میں ترے غم کو بھی سمو دیتے

کہاں وہ شب، کہ ترے گیسوؤں کے سائے میں

خیالِ صبح سے ہم آستیں بھگو دیتے

بہانے اور بھی ہوتے جو زندگی کے لئے

ہم ایک بار تری آرزو بھی کھو دیتے

بچا لیا مجھے طوفاں کی موج نے ورنہ

کنارے والے سفینہ مرا ڈبو دیتے

جو دیکھتے مری نظروں پہ بندشوں کے ستم

تو یہ نظارے مری بے بسی پہ رو دیتے

کبھی تو یوں بھی امنڈتے سر شکِ غم مجروح

کہ میرے زخمِ تمنا کے داغ دھو دیتے

شاعر: مجروح سلطان پوری

(شعری مجموعہ:غزل؛سالِ اشاعت،1970)

Musarraton   Ko   Ehl-e-Hawas   Na   Kho   Detay

Jo   Har   Khushi   Men   Tiray   Gham   Ko   Samo   Detay

Kahan   Wo   Shab   Keh   Tiray   Gaisuon    K   Saaey   Men

Khayaal-e-Subh   Say   Ham   Aasteen    Bhigo    Detay

Bahaanay    Aor   Bhi   Hotay   Hen   Jo   Zindagi   K   Liay

Ham   Aik   Baar    Tiri   Aarzu    Bhi   Kho   Detay

Bachaa   Liay   Mujhay   Tufaan   Ki   Maoj    Nay  Warna 

Kinaaray   Waalay    Safeena   Dabo    Detay

Jo    Dekhtay    Miri   Nazron   Pe    Bandshon   K    Sitam

To   Yeh    Nazaaray    Miri    Be     Basi    Pe   Ro   Detay

Kabhi   To   Yun    Bhi    Umandtay    Sarashk-e- Gham   MAJROOH

Keh   Meray   Zakhm -e-Tamanna   K   Daagh   Dho   Detay

Poet: Majrooh   Sultanpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -