جب ہوا عرفاں تو غم آرامِ جاں بنتا گیا| مجروح سلطانپوری |

جب ہوا عرفاں تو غم آرامِ جاں بنتا گیا| مجروح سلطانپوری |
جب ہوا عرفاں تو غم آرامِ جاں بنتا گیا| مجروح سلطانپوری |

  

جب ہوا عرفاں تو غم آرامِ جاں بنتا گیا

سوزِ جاناں دل میں سوزِ دیگراں بنتا گیا

رفتہ رفتہ منقلب ہوتی گئی رسمِ چمن

دھیرے دھیرے نغمۂ دل بھی فغاں بنتا گیا

میں اکیلا ہی چلا تھا جانبِ منزل مگر

لوگ ساتھ آتے گئے اور کارواں بنتا گیا

میں تو جب جانوں کہ بھر دے ساغرِ ہر خاص و عام

یوں تو جو آیا وہی پیرِ مغاں بنتا گیا

جس طرف بھی چل پڑے ہم آبلہ پایانِ شوق

خار سے گل اور گل سے گلستاں بنتا گیا

شرحِ غم تو مختصر ہوتی گئی اس کے حضور

لفظ جو منہ سے نہ نکلا داستاں بنتا گیا

دہر میں مجروح کوئی جاوداں مضموں کہاں

میں جسے چھوتا گیا وہ جاوداں بنتا گیا

شاعر: مجروح سلطانپوری

(شعری مجموعہ:غزل؛سالِ اشاعت،1970)

Jab   Hua   Irfan   To   Gham-e-Jaan   Banta   Gaya

Soz-e-Janaan    Dil    Men   Soz-e-Deegaraan   Banta   Gaya

Rafta   Rafta    Muqalib   Hoti   Gai   Rasm-e- Chaman

Dheeray   Dheeray     Naghma-e- Dil    Bhi    Fughaan   Banta   Gaya

Main   Akaila   Hi   Chalaa   Tha   Jaanib-e-Manzill   Magar

Laog    Saath   Aatay   Gaey   Aor   Kaarwaan   Banta   Gaya

Main   To   Jab   Jaanun   Keh   Bhar   Day   Saaghar -e-Har   Khaas-o-Aam

Yun   To   Jo   Aaya   Wahi   Peer-e-Mughaan   Banta   Gaya

Jiss   Taraf   Bhi   Chall   Parray    Ham   Aabla   Payaan-e-Shaoq

Khaar   Say   Gul    Aor    Gul   Say   Gulsataan   Banta   Gaya

Sharh-e-Gham   To   Mukhtasir    Hoti   Gai   Uss   K   Huzoor

Lafz   Jo   Munh   Say   Nikla   Daastaan   Banta   Gaya

Dahar   Men    MAJROOH   Koi   Jaawdaan   Mazmoon   Kahan

Main   Jisay    Chhoot a   Gaya   Jawdaan   Banta   Gaya

Poet: Majrooh   Sultanpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -